“نیو ائیر کا جشن اور پیپلز پارٹی کا طالبانی فیصلہ

تحریر : فیض اللہ خان

عنوان پہ حیران ھونے کی ضرورت نہیں،بس کبھی کبھی حالات کا جبر آپکو “دشمنوں ” کے اقدامات کی نقل پر مجبور کر ھی دیتے ھیں ۔

جیسا کہ نئے سال کی آمد کا جشن،اب آپ ھی سوچیں کہ ساحل سمندر پر جشن کے نام پر کیا طوفان بدتمیزی مچتا ھوگا کہ جسکے تدارک کیلئے پی پی جیسی سیکیولر ،لبرل اور لادین پارٹی کو “ساحل سمندر” کے راستے بند کرنا پڑیے،ویسے یہ پابندی صرف “عوامی بدتمیزوں” کے واسطے ھے ۔

اگر آپ صاحب حیثیت ھیں تو پھر “گھر،ھوٹل” میں جشن منانے سے آپکو کوئی نہیں روک سکتا ،بلکہ سرکار حفاظت کرے گی ،بس سی ویو جانے کی کو شش کوئی نہ کرے جشن تو ھوگا نہیں پر پولیس والے سردی میں آپکی گرم جیب ضرور ٹھنڈی کردیں گے

دلچسپ امر یہ ھیکہ یہ وھی روشن خیال پیپلز پارٹی ھے جو جنرل ضیاء کے دور میں ایسے اقدامات کی سب سے بڑی ناقد رھی ھے  لیکن کیا کہئے کہ اسے وھی سب کچھ کرنا پڑ رھا ھے جسکےخلاف بولتے بولتے انکی زبانیں نہیں تھکتی تھیں ،آپس کی بات تو یہ بھی ھیکہ جب نیو ائر کی خرافات کھلے عام روکنے پر آپ “جبری” پابندی لگا کر عوام کی سہی ترجمانی کرھی رھے ھیں تو کیا ھی اچھا ھو آپ سارے اچھے کام بھی “جبری” ھی سہی لیکن کرنے لگ جائیں ۔

آپ سے زیاد٥ کی تو امید ویسے بھی نہیں لیکن کیا ھی اچھا ھو آپ دفاتر میں اقامت صلوا٥ کا نظام بنا دیں ،کتنا اچھا ھو کہ آپکے وزرا سیدنا عمر کی پیروی میں لوگوں کے محلوں میں جا کر مسلے سنیں مگر دکھاوے کے لئے نہیں بلکہ اللہ کیلئے ، چھوڑیں صاحب” امیدیں” کچھ زیاد٥ ھی باندھ لیں بھول گیا تھا کہ آپ نے حالیہ پابندی “اسلامی” جذبے سے سرشار ھو کر نہیں بلکہ “نقص امن” کے خدشے کے پیش نظر لگائی ھے ،لیکن جناب کچھ بھی کہو “صف طالبان” میں آپ بھی شامل ھو ھی گئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *