1

“غزہ کی عید کیسی ہوگی۔۔؟”

 تحریر:  شازیہ عبدالقادر

آج عید نماز کے بعد بارش میں بھیگتے واپس آتے ہوئے یہی سوچتے رہے۔۔۔۔وہاں کی تصویریں بولتی نہیں ہیں۔۔۔دل کو چیر جاتی ہے روح کو زخمی کر رہی ہیں
انہوں نے عید کی خریداری کیسے کی ہوگی۔۔۔کی بھی ہوگی یا نہیں ۔۔۔بچوں کی خاطر زخمی دلوں کو سنبھالتے ہوئے عید کے لئے تیار کسیے ہوئے ہونگے۔۔۔۔۔عید سے پہلے آفسز کو جاتے ہوئے گھر والوں سے رخصت ہوتے ہوؤں کو گھر والے دعاؤں کے ساتھ کیا یہ کہتے ہونگے زندگی رہی تو ملیں گے ۔۔۔۔اور دفتر میں کام کے دوران کتنی بار فون کرتے ہونگے کہ خیریت سے ہیں۔۔۔گھر والے گھر میں کام کاج کرتے آسمان کی ایک آہٹ پہ بھی چونک چونک جاتے ہونگے ۔۔۔۔۔۔۔کہیں کوئی میزائل تو نہیں آرہا۔۔۔۔۔۔ زمیں کی گڑگڑاہٹ سے دہل جاتے ہونگے کہ اسرائیلی ٹینکس ان کے گھر روندنے تو نہیں آگئے۔۔۔۔گولیوں کی تڑتڑاہٹ،کسی دھماکے کی گونج کسی سنسنی خیز خبر سے دہل کر اپنے گھر سے باہر کے افراد سے رابطے کرتے ہونگے۔۔۔۔۔فون بند ملتا ہوگا تو پریشاں حالی سوار ہو جاتی ہوگی۔۔۔۔۔گھر کے افراد ۔۔۔بچوں کو آوزیں دے کر بلاتے ہونگے کہ نگاہوں سے دور نا جانا…..
کیسے ہونگے ان کے دن اور رات۔۔۔۔خواتین اپنے برقعے سامنے رکھتی ہونگی؟؟؟ عید کے دن کیا کھائیں گے۔۔۔۔۔کیا کھلائیں گے۔۔۔۔کیا وہ یہ سوچتے ہونگے؟؟؟؟کس کس کے گھر جائیں گے یہ پلان کرتے ہونگے۔۔۔۔؟؟؟
اور جب اسرائیلی درندگی کا شکا ر ہوتے ہونگے تو بہتے خون کے ساتھ اپنے جان کے ٹکڑوں کے اٹھا کر بھاگتے ہوئے خیال آتا ہوگا کہ گاڑی کہاں ہے۔۔۔۔بنا سر کے بدن لئے ہسپتال لے جاتا ہوا باپ سوچتا ہوگا کہ اسکا تو سر ہی نہیں رہا اسے ہسپتال کیوں لے جارہا ہوں۔۔۔۔کٹی پھٹی لاشوں کو وہ اکٹھا کیسے کرتے ہونگے۔۔۔۔۔جن بچوں سے عید سجنا تھی وہ گل مرجھا جانے پہ انکی عید کیسی ہوگی۔۔۔۔۔وہ جو گھر کی رونق تھے،،،،جن سے گھر کے صحں میں مہکار تھی،جن کے مستقبل کے سپنے سجائے تھے۔۔۔۔جنہوں نے بڑے ہو کر سہارا بننا تھا۔۔۔۔۔وہ گل مرجھا گئے،،،،،وہ مہکار ظالموں نے نوچ لی،،،،،،،،وہ مستقبل کے خواب چکنا چور کر دئیے گئے تو پھر انکی عید کیسی ہوگی۔۔۔۔۔

وہ نیا نویلہ جوڑا جو ابھی زندگی کے سفر کے آغاز پہ تھا ۔۔۔۔ساتھی بچھڑ جانے پے وہ بیوہ سکتہ میں ہوگی۔۔۔۔۔اسکا سہاگ اجڑ جانے پہ اسکے ماں باپ کیا سوچتے ہونگے۔۔۔۔۔۔دلہا بنا کے نئی زندگی کی دعائیں دینے والے ماں باپ خالی ہاتھوں کو دیکھتے ہونگے۔۔۔۔۔کیسی ہوگی انکی عید۔۔۔؟؟؟
گھر کو سجانے تھا عید پہ لیکن یہ تو کھنڈر بن گیا ہے۔۔۔۔پتھروں پہ بیٹھے گھر والے ان کھنڈروں میں پیاروں کے اعضاء سمیٹتے،،،انکے خون کی مہک سے دل فگار ہوتے ہونگے۔۔۔۔۔۔۔
کہاں سے لاش پوری ہوگئی کونسا عضو ابھی نہیں ملا۔۔۔۔۔کیسی ہوتی ہوگی انکی عید۔۔۔۔۔۔۔
سوچتے ہونگے کہ سوشل میڈیا کا دور ہے۔۔۔ہمارے مسلمان بہن بھائی ہماری عکس بندی دیکھتے ہونگے۔۔۔ضرور ہمارے لئے کچھ کریں گے۔۔۔۔۔ہم قبلہ اول کی جنگ لڑ رہے ہیں۔۔۔جو پوری امت کی جنگ ہے لیکن جب امت کی جانب سے خاموشی ہوتی ہوگی تو وہ اس بےحسی پہ غمناک ہوتے ہونگے۔۔۔رب کو فریاد کرتے ہونگے۔۔۔۔۔۔کہاں ہیں تیرے نام لیوا ۔۔۔۔کہاں ہیں نبی ﷺ کے امتی ۔۔۔۔۔۔۔کیا انکو ہماری کٹی پھٹی لاشیں نظر نہیں آتیں۔۔۔کھنڈر بنے تباہ گھر نہیں دیکھتے۔۔۔۔۔۔مسلمان بہنوں بیٹیوں کا بے آبرو ہونا دیکھ کر غیرت نہیں جاگتی۔۔۔۔۔جب وہ یہ سب سوچتے ہونگے تو کیسی ہوتی ہوگی انکی عید؟؟؟

ہسپتال لے کے گئے ہونگے کہ اپنی کلی کو مرجھانے سے بچا لیں۔۔۔۔اپنے پیاروں کوسمیٹ کر لےجا رہے ہونگے کہ ہسپتال میں اسرائیلی کی بمباری کا خود بھی شکار ہوگئے ہونگے تو گھر والے ایک کی ساتھ دو سری جدائی اٹھاتے ہونگے تو کیسی ہوتی ہوتی ہوگی عید۔۔۔۔۔۔
آہ کیسی ہوتی ہوگی انکی عید۔۔۔۔اے میرے معصوم بہن بھائیو بچو۔۔۔۔۔۔میں امت کی ایک بے بس بیٹی ہوں ۔۔۔۔ میرا دل آپکے لئے تڑپتا ہے۔۔۔میری عید کیسی ہے۔۔۔۔۔۔
میں بتاؤں میری عید آپکے غم سے بھری تھی۔۔۔۔۔مجھے نہیں معلوم کہ عید کی روایتی تیاری کس طرح گھسٹ کی مگر جیسے کبھی پہلے تھی ویسی نہیں کی اور جو کی گئی اس نے دل کو خوش نہ ہونے دیا۔۔۔۔۔ہم عید منا رہے ہیں لیکن ہمارے دل آپکے دکھ سے بھرے ہیں ۔۔۔بار بار آنکھیں بھیگ جاتی ہیں ۔۔۔۔۔۔دل پھٹنے کو پڑتا ہے۔۔۔۔بچوں نے مہندی لگائی تو آپ کے خون نے بے چین کیا۔۔۔۔۔گھر کو دیکھتے ہیں تو آپکے گھر یاد آتے ہیں۔۔۔ہمارا سکون ہمیں نصیب نہیں ۔۔۔۔۔۔۔کہ آپ بے سکون ہیں۔۔۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

“غزہ کی عید کیسی ہوگی۔۔؟”” ایک تبصرہ

  1. dil khoon k aansoo rota hai k zulm ki intiha hai aur hamara ye behis ma’shra aaj imran khan k protest main behis bana na mard na aurat sub k sub b his banay gano pe dhol ki thaap pe naach raahay hain, agar yehi behisi rahi tu shayad hum b phalistine jaisay zulm ka shikar hojayaen k israeel ki jaga koee aur islam dushman hamari behisi ka faida utha kar hum pe waisay hi zulm karay jaisay aaj phalistine main hain, Allah islami ma’ashray ko apni amaan main rakhay . aur hamaray philistinee behnoo, bhaiyoon, buzurgun, bachon ka Hami O Nasir ho aur apni hifz o amaan main rakhay.

اپنا تبصرہ بھیجیں