“خوشحال پاکستان”

تحریر : ارشد اللہ  
جماعت اسلامی پاکستان کے اجتماع عام نے مینار پاکستان پر کامیابی کے جھنڈے گاڑ دیئے۔بلامبالغہ لاکھوں لوگوں کی شرکت نے سیاسی جماعتوں سمیت ہر طبقہ فکر کو ورطہ حیرت میں ڈال دیا ہے۔گذشتہ دو سالوں سے مینار پاکستان پر تقریبا سبھی سیاسی ومذہبی سیاسی جماعتوں نے جلسے کئے،جس کے شرکاء کے مختلف اندازے لگائے گئے۔لیکن مینار پاکستان پر جماعت اسلامی کا اجتماع عام ان سب سے منفرد اور الگ ہیں۔ اب تک کے تمام جلسے مینار پاکستان کے صرف ایک چوتھائی حصے پر ہوئے جبکہ جماعت اسلامی کا پروگرام مینار پاکستان کے پورے سبزہ زار پر کامیابی کی داستان سنا رہی ہیں۔
جماعت اسلامی سے پہلے جن سیاسی جماعتوں نے جلسے کئے وہ زیادہ سے زیادہ 6 گھنٹے چلے جبکہ جماعت اسلامی نے تین دن کی بستی سجا کر اپنے مخالفین کو کھلا چیلنج دے کر تمام سیاسی جماعتوں کو کٹہرے میں کھڑا کرکے گویا “زبان جلسہ” میں ان کو دعوت مبازرت دے ڈالی۔
اجتماع عام کے پنڈال کا اگر جائزہ لیا جائے تو مینار پاکستان کا پورا سبزہ زار اور ساتھ میں بادشاہی مسجد کے احاطے تک پنڈال پھیلے ہوئے ہیں،مینار پاکستان کے مین گیٹ سے باہر حید سائیں کے مزار تک پنڈال ہی پنڈال اجتماع کی کامیابی کی نوید سنارہی ہیں۔
اجتماع عام میں لاکھوں کی تعداد میں انے والوں کے لئے کھانے،رہائش،صحت،سٹالز وغیرہ کا انتظام صرف ایک سیاسی پارٹی نہیں کرسکتی اس کے لئے منظم اور تربیت یافتہ کارکنان کی ضرورت ہیں اور یہ منظم کارکنان صرف جماعت کے پاس ہیں کیونلہ دوسرے مذہبی جماعتوں کے پروگرامات میں وہ صرف رہائش دیتے ہیں دوسرے ضروریات فرد کا انفرادی فعل تصور کیا جاتا ہے۔
اس لحاظ سے دیکھا جائے تو جماعت اسلامی کے اجتماع عام کے لئے “کامیاب اجتماع” کا لفظ چھوٹا پڑ جاتا ہے۔ اس اجتماع کے شرکاء کا اندازہ لگانا مشکل ہیں،مینار پاکستان کے پورے سبززار میں ہر طرف سر ہی سر نظر ارہے ہیں۔مرد و خواتین کا الگ الگ پنڈال جہاں ایک طرف حیا کی اسلامی نظریئے کی عکاسی کررہی ہیں تو دوسری طرف خواتین کی ہزاروں کی تعداد میں شرکت جماعت اسلامی کی کامیاب اجتماع غماز ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *