“11ستمبر قائدؒ کا یوم وفات”

تحریر: شہزاداسلم مرزا

گیارہ ستمبر بابائے قوم قائد اعظم محمد علی جناح کا 67واں یوم وفات ہے
عموما دیکھنے کو ملتا ہے کہ کسی خاندان کا کوئی بزرگ وفات پا جائے تو سب مغفرت اور درجات کی بلندی کی دعا کے ساتھ ساتھ ان کے اوصاف بھی یاد کرتے ہوئے اپنے بچوں کو بڑے فخر سے ان پر عمل کرنے کی ترغیب دیتے ہیں ۔جہاں تک محمدعلی جناحؒ کی بات ہے وہ تو ساری قوم کے بزرگ و رہنما تھے ۔۔ آیئے ان کے یوم وفات پر مختصر انداز میں ان کی شخصیت کے بنیادی اوصاف کو یاد کریں اور عمل کرنے کا عہدکی تجدید کریں۔
٭قائداعظم ؒ اعلیٰ تعلیم یافتہ اور کتاب دوست شخصیت تھے،
٭ قائداعظم ؒ کی ساری زندگی نفاست ،شائستگی اور اعلیٰ ذوق کی عمدہ مثال تھی،
٭ قائداعظمؒ کے دشمن بھی ان کی سچائی اور ایفائے عہد کی گواہی دیتے رہے،
٭ برصغیر کے دور غلامی میں بھی قائداعظمؒ کبھی بھی ہندو اور انگریزوں سے ذہنی غلامی اور مرعوبیت کا شکار نہیں ہوئے،
٭ قائداعظمؒ نے سچائی، علم اور مدلل گفتگو کی طاقت سے سب کو زیر کیا،
٭ قائداعظمؒ نے کبھی بھی بحیثیت فرد اور قائد عزت، غیرت اور حمیت کا سودا نہیں کیا،
٭ قائداعظمؒ نے زندگی کا ایک مقصد منتخب کیا اور صحت کی پرواہ کیئے بغیر پوری زندگی اس مقصد کے حصول میں لگا دی اور بالآخر مقصد حاصل کربھی لیا،
٭ قائداعظمؒ مکمل جمہوری پسند شخصیت تھے وسیع مشاورت کے بعد ٹھوس فیصلے کرتے،
٭ قائداعظم ؒ جتنا برصغیر کے مسلمانوں کے لیئے فکر مند تھے اتنا ہی پوری امت مسلمہ کی حالت زار پر بھی تڑپتے تھے،
٭ قائداعظمؒ پاکستان کے مقصد وجود سے مکمل یکسوئی کے ساتھ آگاہ تھے اس ریاست کی بنیاد صرف اور صرف جمہوریت اور اسلام ہو گا،
٭قائداعظمؒ پر ساری زندگی کبھی مالی و اخلاقی کرپشن اور قانون شکنی کا الزام تک بھی نہیں لگا،
٭ قائڈاعظمؒ شخصیت پرستی، اقرباءپروری، مفاد پرستی سے کوسوں دور تھے،
٭ پاکستان بننے کے بعد قائداعظم نے اپنی تمام دولت، جائیداد اور املاک پاکستان کو وقف کر دیں۔
اب ذرا سوچیں کہ ۔۔
ہمارے ذاتی رویے اور ہمارے منتخب کردہ حکمرانوں کے رویے قائداعظمؒ کے رویوں سے کتنے مختلف بلکہ متضاد ہیں اور پھر ہم سوال اٹھاتے ہیں کہ پاکستان کیوں ناکام ریاست بنتی جا رہی ہے؟ دنیا کہاں پہنچ گئی پر پاکستان کیوں ترقی نہیں کررہا ؟ کیوں پاکستان میں مارشل لا لگتے ہیں ؟ کیوں پاکستانی عوام روزہ مرہ چیزوں سے بھی محروم ہیں ؟ کیوں پاکستان میں ہر طرف جہالت کے ڈھیرے ہیں ؟ کیوں ابھی تک پاکستان پر چند وڈیرو، جاگیرداروں اور صنت کاروں کے خاندانوں کا راج قائم ہے ؟
اس کا جواب کہیں اور نہیں اپنے اندر تلاش کرنا ہو گا اور تبھی بہتری آئے گی۔ ان شاءاللہ
(شہزاداسلم مرزا)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *