“معافی اے اھل شام معافی “

تحریر – فیض اللہ خان

“معافی اے اھل شام معافی ”
تم کیوں ھمیں جگانے آجاتے ھو ؟؟
ھم مرد٥ ابدان کو ، کہ جنکے جسم سے روح کب کی پرواز کر چکی ھے۔۔۔۔
ھم برف کی سلوں کیطرح بے حس اور ٹھنڈے ھوچکے ھیں ،تمہارا شور ھمیں سنائی نہیں پڑتا۔۔
ھمیں مگن رھنےدو اپنے احوال میں ۔۔۔۔
مستیوں میں ،خوش گمانیوں میں اور غلط فہمیوں میں ۔۔
تمہاری آوازیں ھمارے مرد٥ ضمیروں کو جگانے کی ناکام سعی کرتی ہیں ۔
راز کی بات سنو گے ؟؟؟؟
یہ آوازیں ھم تک پہنچتی ھیں بغیر کسی رکاوٹ کے ۔۔۔۔۔۔
لیکن ھم جانتے ھوئے انجان بن جاتے ھیں ایک نامعلوم خوف ھمیں گھیرے رکھتا ھے
۔۔۔۔۔
تمہیں کیا خبر کہ موت کا، قید اور معاش کا خوف کیسا ھوتا ھے؟؟؟؟ ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ تم ھر ایسے معاملے بے نیاز ہو چلے ہو ۔۔۔۔۔
لیکن ہمیں زندگی پیاری ھے ۔۔۔ اور دنیا ۔۔۔۔۔ ہاں دنیا کی وہی محبت جو اپنی پوری قوت کیساتھ اجسام سے روح نکال کر دنیا بھر دیتی ھے۔۔۔۔۔۔
کہیں یہ نہ سمجھ بیٹھنا کہ ھم بہت خوبصورت دنیا میں مگن ھیں۔۔۔۔۔
ھماری دنیا تو غربت ،جھوٹ،مکر اور بے ایمانی سے عبارت ھے جہاں کہیں بدامنی ھے کہیں بیماری ھے۔۔۔ کہیں غربت کہیں لیڈروں کے دھوکے ھیں کہیں کرپشن ھے۔۔۔۔ کہیں فرقے ھیں کہیں شخصیت پرستی ھے کہیں ظالمانہ جمہوریت ھے۔۔۔۔۔
لیکن ، لیکن ان سب کے باوجود ھمیں یہ “دنیا” عزیز نہیں بلکہ عزیز تر ھے
مت کہو ھمیں اسے چھوڑ نے کو ۔۔۔۔
اپنے حق میں نکلنے کو ۔۔۔۔۔۔
ہماری مجبوری سمجھو ۔۔۔
چلو ہم اپنی جگہ تمہیں رکھ کر نہیں سوچ سکتے تو تم ہی ایسا کرلو ؟؟؟؟
ہماری مشکلات کو سمجھنے کی کوشش کر رھو ۔۔۔
اے مظلومو۔۔۔۔۔۔ اے بے کسوں۔۔۔۔۔۔ اے درد کی گٹھری کو ساتھ لئیے پھرنے والو ۔۔۔۔۔۔
تم جانتے ہو کہ میں نظریں چراتا ہوں ۔۔۔۔۔
تمہیں بھلانے کی شعوری کوشش کرتا ہوں ۔۔۔۔
تمہارے سسکتے بلکتے ، لہو میں تراور گرد و غبار سے لتھڑے کلیوں جیسے معصوم چہرے اس وقت میرے سامنے پوری آب و تاب سے آن کھڑے ہوتے ہیں جب میں اپنے بچوں میں مشغول ہوتا ہوں ۔۔۔۔
انہیں آرام پہنچاتا ہوں ۔۔۔۔۔
یخ بستہ کمرے میں آرام دہ بستر پہ ان پہ گرم کمبل ڈالتا ہوں ۔۔۔۔۔
تم نے کس جرم کی سزا پائی ؟؟؟؟
کچھ جانتے ہو ؟؟؟؟
کچھ معلوم ھے ؟؟؟
خبر رکھتے ہو ؟؟؟؟
آہ ۔۔۔ کہ تم امت مرحومہ کے جسد خاکی سے جڑے ہوئے ہو ۔۔۔
وہ امت جو تمہیں بھلا چکی ۔۔
مگر چند غرباء کے سوا ۔۔۔۔۔۔
جو تم پہ مرمٹے ، لٹ گئے مٹی کا پیراھن ہمیشہ کے لئے اوڑھ چکے ۔۔۔۔۔
آسمان سے گرنے والا بارود جن کا مقدر ٹھہرا ۔۔۔
لیکن وہ ڈٹے رھے ۔۔۔
اگلی صفوں کھڑے رھے ۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں کیا پتہ کہ عالمی نزاکتیں کس بلا کا نام ھے ؟؟؟؟؟
بین الاقوامی اصول ، تعلقات اور ربط و ضبط کسے کہتے ہیں ؟؟

کوئی تبصرہ نہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *