گستاخانہ مواد کے خلاف حکومتی پیش رفت

مسلمان باعمل ہو یا بےعمل، نماز پڑھتا ہو یا نہ پڑھتا ہو، دیگر معاملات میں بھی جیسا ہو، اپنے نبی کریم ﷺ کی گستاخی کسی صورت برداشت نہیں کرسکتا۔ ہمیں کوئی ماں یا بہن کی گالی دے ہم سے برداشت نہیں ہوتی ہم مرنے مارنے پر اتر آتے ہیں، گالی دینے والی کا چہرہ نوچنے کی کوشش کرتے ہیں۔ پھر ایک گیا گزرا مسلمان بھی اپنے نبی ﷺ کی گستاخی کیسے برداشت کرسکتا ہے۔ کہ ایمان کی تکمیل ہی ممکن نہیں جب تک نبی کریم ﷺ جان و مال، عزت، اولاد سے بڑھ کر عزیز نہ ہوجائیں۔
الحمد سوشل پر ہزاروں مسلمانوں نے الحادیوں، قادیانیوں اور موم بتی مافیا کو بےنقاب کیا۔ ان کی باتوں کا منہ توڑ جواب دیا۔ ان کے خلاف قلمی جہاد کیا۔ گستاخوں کے خلاف سوشل میڈیا پر موثر احتجاج کیا اور بات عدالت پہنچی، ججز بھی آبدیدہ ہوئے سخت احکامات دے۔
وزیر اعظم نواز شریف اور وزیر داخلہ کی آنکھیں بھی گستاخانہ مواد دیکھ کر بھر آئیں۔
وزیراعظم نے سخت احکامت دے۔ روزانہ کی بنیاد پر پیش رفت سے آگاہ کرنے کا حکم دیا۔
حکومت کی درخواست پر فیس بک انتظامیہ نے بھی مثبت جواب دیا اور ٹیم پاکستان بھیجنے کی یقین دہانی کروائی ہے۔
آج گستاخوں کے پیجز نام تبدیل کرنے لگے ہیں، آئی ڈیز ڈی ایکٹیویٹ ہونے لگی ہیں۔

گستاخوں کو پتا ہونا چاہئے یہاں ممتاز قادری، غازی علم دین اور عامر چیمہ بہت ہے۔ اسی لیے نہ قانون کے خلاف جاؤ نہ مسلمانوں کو قانون ہاتھ میں لینے دو۔

پاکستان زندہ باد۔

شرجیل قریشی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *