امت پہ تیری آ کے عجب وقت پڑا ہے

تحریر : میمونہ اعظم
10402413_755563857797078_8475156622277762093_n
خاصہ خاصانِ رسل وقتِ دعا ہے ـــــــــ

امت پہ تیری آ کے عجب وقت پڑا ہے

مجھے اس وقت وہ چڑیا یاد آرہی ہے – جس نے آتشِ نمرود کو ٹھنڈا کرنے کے لئے بساط بھر اپنا حق ادا کیا تھا ــ اس پانی کے قطرے کی حیثیت اتنی نہیں تھی ، کہ آگ بجھ سکتی ـــ مگر اتنا تو ہوا کہ وہ ظالمین میں سے اور خاموش رہنے والوں میں سے نہ ہوئی ــ اس کا پانی کے چند قطرے لانا اس کے لئے حجت بن گیا ـــ کاش کہ ہم میں اس چڑیا جتنا ہی جذ بہ پیدا ہو جائے ــــ معصوم خون میں لتھڑے پھول جیسے بچوں کے چہرے دیکھ کہ بھی ہم میں کوئی احساس بیدار نہیں ہو تا ــ بحثیتِ مجموعی ہم اتنی بے حس قوم کیوں ہیں ؟؟؟ ہم کیسے رو زہ دار ہیں
کہ اپنی عبادتوں کےدوران ہم میں ذرہ برابر بھی احساسِ شرمندگی پیدا نہیں ہو تا کہ جس اللہ کے سامنے ہم کھڑے ہیں وہ کیا سوچ رہا ہو گاـــ ہم بے حسی سے لبریز دل لئے بھی اپنی عبادتوں اپنی دعاؤں پہ اتنے مطمئن اور سرشار ہیں کہ ہمیں لگتا ہے کہ اس کے پسندیدہ بندے تو ہم ہی ہیں ــ کیا ہم وہ وقت بھو ل گئے جب غزوہ تبوک پہ نہ جانے والے تین صحابہ کرام کا بائیکاٹ کر دیا گیا ــ پھر جب انہوں نے توبہ کی تو ان کی توبہ قبول ہوئی ــ مگر ہم تو ایسے ہیں کہ توبہ تو دور کی بات ہم میں تو کوئی احساس بھی نہیں جاگتا ــ چلیں مان لیتے ہیں ہم کچھ نہیں کر سکتے مگر ہمارے تو دل بھی سوگوار نہیں ـــ ہم تو اپنی آنے والی عید کی خوشیوں میں اس قدر مگن ہیں کہ ہم نے کبھی اس پہلو پہ سوچا ہی نہیں ــ اگر خدانخواستہ ہم پہ ایسی صورتِحال آجا ئے ـــ
تو کیا تب بھی ـــ تب بھی ہم ایسے ہی جذبات رکھیں گے ـ —

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: