جامِ بے طلب از شفا ہما (ناول) – باب پنجم – قسط نمبر42

تب ہی قاسم کی کار کا ہارن اسکی سماعتوں سے ٹکرایا تھا وہ اس آواز کو پہچانتی تھی۔۔۔لبوں پر پھر ایک بار مسکراہٹ بکھر گئی۔۔۔۔، بہت تیزی سے سیڑھیاں پھلانگ کرنیچے پہنچی۔۔۔۔۔تو چوکیدار نے اُٹھ کر دروازہ کھولا۔۔۔۔، وہ باہر ..مزید پڑھیں

جامِ بے طلب از شفا ہما (ناول) – باب چہارم – قسط نمبر37

’’کیف حالک۔۔بی بی۔۔السلام و علیکم!“ عربوں کے مخصوص لب و لہجے میں اسنے اند آ تے ہی کہا تھا، ”ٹھیک ہوں میں الحمداللہ۔۔۔“ مسکرا کر اسنے مصروف سے انداز میں جواب دیا، ”تم ٹھیک ہو۔۔۔؟؟کسی چیز کی ضرورت تو نہیں؟“ ..مزید پڑھیں