جامِ بے طلب از شفا ہما (ناول) – باب ششم- قسط نمبر51

اگلے دن کا سورج بے پناہ مسرتیں لیے طُلوع ہوا تھا۔۔۔آج چڑیوں کا چہچہانا بھی نغمہ لگ رہا تھا۔۔۔۔ہر چیز خوشی سے تھرکتی محسوس ہو رہی تھی۔۔۔۔۔ سمندر کی لہریں بھی بہت اونچائی تک اوپر جا رہیں تھیں۔۔۔موسم بھی بہت ..مزید پڑھیں

جامِ بے طلب از شفا ہما (ناول) – باب ششم- قسط نمبر49

نہیں تو۔۔۔مجھے اجیہ سے تو کوئی مسلہ نہیں ہے۔۔۔آئی سی یو میں لیٹی سفید پٹیوں میں جکڑی زرد چہرے والی وہ لڑکی جو کبھی سفید موتیوں والا اسکار ف پہنتی تھی۔۔۔میں اس سے کیوں حسد کرونگا۔۔نائلہ ابھی پریشان ہے۔۔ اجیہ ..مزید پڑھیں

جامِ بے طلب از شفا ہما (ناول) – باب پنجم – قسط نمبر46

لیکن ناصر۔۔۔کون ہے۔۔۔۔نائلہ کل رات ناصرکے بارے میں ایک اور بات بتانا چاہتی تھی۔۔۔کون سی بات۔۔۔نائلہ۔۔۔نائلہ۔۔وہ تو رو رہی تھی۔۔۔اوہ ہ ہ۔۔۔۔۔لیکن اب وہ کہاں ہے ہاں وہ آئی سی یو میں تھی لیکن۔۔۔۔۔اسنے چونک کر سامنے دیکھا،نرسیں آ جا ..مزید پڑھیں