یک جنبش انگشت کی قوت! ضیاء چترالی




فلسطینی قضیہ میں معاندانہ کردار ادا کرنے پر صارفین کی جانب سے فیس بک کے خلاف ’’پلے اسٹور‘‘ کے اکھاڑے میں اسٹار کا جو کھیل کھیلا گیا، اس نے انتظامیہ کو عرش سے فرش پر لا کھڑا کیا۔ آج فیس بک انتظامیہ نے فلسطینی قوم سے باقاعدہ معذرت کی ہے۔ پانچ، چار یا تین کے بجائے یک اسٹار دینے سے بازار حصص میں فیس بک کے شیئرز کی قیمت میں کافی پڑا ہے۔

اس مہم سے قبل فیس بک کے فی شیئر کی قیمت 319 ڈالر تھی اور اب 316.2 تک گر چکی ہے۔ میں نے شروع میں اس مہم کو کوئی اہمیت نہیں دی تھی۔ لیکن آج الجزیرہ نے سوشلستان کے ماہرین کی آرا پر مشتمل اس پر ایک رپورٹ چلائی ہے۔ رپورٹ کے مطابق عالمی بازار حصص پر گہری نظر رکھنے والی ویب سائٹ MarketWatch نے یہ اعدادو شمار جاری کرکے فیس بک کی ریٹنگ گرنے کی تصدیق کی ہے۔ 52 ہفتوں کے بعد پہلی بار فیس بک کے شیئرز کی قیمت میں 0.75% کمی ہوئی ہے۔ پہلی بار فیس بک کو اپنی مارکیٹ ویلو کے گرنے کا خوف لاحق ہوا ہے۔ علاوہ ازیں سوشل میڈیا کی مقبول ترین سائٹ فیس بک کو یہ خدشہ بھی لاحق ہوگیا ہے کہ ڈس لائک یا ون لائک یا ایپ ہی ڈیلیٹ کرنے سے سماجی روابط کی ان دوسری سائٹس کی طرف صارفین کا رجحان بڑھ سکتا ہے، جو فیس بک سے مقابلے کی دوڑ میں شریک ہیں۔ جیسے TikTok، Twitch، snapchat اور clubhouse وغیرہ۔ اس کا مطلب فیس بک کی بادشاہی کا خاتمہ۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ آپ ایک اسٹار کو معمولی نہ سمجھیں۔ اس کا بہت بڑا اثر پڑتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں