خط سیریز: "زندگی" سسکتی روح (1) – بنتِ حسام الدین




میری پیارى سب زندگيوں ……..السلام علیکم ورحمة اللہ وبركاته
الله⁦ پاک سے امید ہے کہ آپ سب خیریت سے ہونگى ہم بھی خیریت سے ہیں. آپ سوچیں گى آج کیسے یاد کر لیا. حقیقت میں ہم آپ کو ایک دن بھی نا بھولے۔ اور یقین کریں ہر مہینے آپ کو خط لکھے ہیں۔ لیکن وہ آپ کو پوسٹ ہونے کے بجاۓ ہماری میز کی دراز میں پوسٹ ہوتے رہے!!
لکھنے میں مزہ آتا ہے. اور پوسٹ کروانا ایک مرحلہ ہے. صبح جب یہ آفس جا رہے ہوتے ہیں تو ہم اس وقت گھن چکر بنے ہوتے ہیں. ایک ہفتہ تک لفافہ بغیر ایڈریس کے رہتا ہے کہ ابھی لکھتے ہيں، ابھی لکھتے ہيں. اللّٰه⁦ اللّٰه⁦ کر کے لکھ لیتے ہيں تو روز ان کو پوسٹ کرنے کے لیے دینا بھول جاتے ہبں ہفتہ بھر میں لفافہ دراز کے اندر چلا جاتاهے. اور دراز صاحبہ وصولیابی کا سرٹیفیکیٹ لگا کر اپنے اندر سمو لیتی ہیں ! اور ہم اگلا خط لکھنے بیٹھ جاتے ہیں. اب کی عہد کیا ہے کہ یہ خط ضرور پوسٹ کریں گے۔ اب ہم کو اس کو پوسٹ کرنا بالکل بھی مشکل نہیں لگتا۔ میرے پیارے الله نے اس کو بے حد آسان کر دیا۔ الحمدللہ ۔ ہمارا دل چاہتا ہے کہ ہم آپ سب کو وہ باتیں بتائيں جو ہم نے اپنے مدرسے سے حاصل کی ہیں. كيونكه وه سارى باتيں زندگى كو دائمى اور خوشگواربنانے كے ليے ہيں. اللّٰه سے اميد ہے كه آپ سب زندگيوں كو يه باتيں پسند آئيں گى انشاءاللّہ تعالیٰ ۔
ہمارے ذہن ميں مدرسے كى باتيں گهوم رهى ہيں. ہم كو اپنے مدرسه سے عشق ہے. دل چاہتا ہے كه ايک ايک زندگى كو كهينچ كر مدرسه لے جا كر بٹها ديں. كيونكه مدرسه سے ہميں ايک ايسا علم ملا جس نے ہمیں مبہوت کر دیا اور وہاں کی معلمات اور اساتذہ تو اتنے اچھےکہ ہمارے پاس الفاظ ہی نہیں تعریف کے لیے۔ جو کچھ بھی وہ بتاتے بس دل چاہتا ہمارے اندر رچ بس جاۓ .ساری زندگی مونٹسری اسکول کالج یونیورسٹی کو جانا. اور اب یہ جانا کہ شروع سے مدرسہ نہ جانے کا دکھ کیا ہوتا ہے. يقين کریں میری پیاری زندگیوں، مدرسہ نہ جانا ہماری روح کی ایسی تشنگی ہے جو کبھی سیراب نہیں ہو سکتی. كاش ہم اپنی روح کو جان لیتے، کیسا سسکتی ہے مدرسہ جانے کے لیے. افسوس ہم نے اسے محروم کیا اس کے اصل سے۔ہم اپنی روح کو ہی نہیں جانتے. مدرسہ جا کر ہی تو اپنی روح کو جان پاتے ہیں۔ كاش ہمارى بات سے آپ سب اپنی روح کو جاننے کی کوشس کریں اسلیے کہ روح ہے تو زندگی ہے روح نہیں ہے تو زندگی بھی نہیں ہے۔بات سنجیدہ ہوگیٔ۔ یہ روح کے پنپنے کی باتیں ہیں، کوئی ہنسی کھیل نہیں ہے۔
سورہ بقرہ…….. يُؤْتِي الْحِكْمَةَ مَن يَشَاءُ ۚ وَمَن يُؤْتَ الْحِكْمَةَ فَقَدْ أُوتِيَ خَيْرًا كَثِيرًا ۗ وَمَا يَذَّكَّرُ إِلَّا أُولُو الْأَلْبَابِ ﴿٢٦٩﴾ترجمہ:جس کو چاہتا ہے سمجھ دے دیتا ہے اور جسے سمجھ دی گئی تو اسے بڑی خیر ملی اور نصیحت وہی قبول کرتے ہیں جو عقل والے ہیں…..ایک حدیث کا مفہوم ہے کہ جس کے ساتھ اللّٰه تبارک و تعالی خیر کا ارادہ فرماتے ہیں ، اسے دین کی سمجھ عطا فرما دیتے ہیں۔ اللہ پاک ہم سب زندگیوں کے ساتھ خیر کا ارادہ فرما لیں۔ آ مین۔ مدرسہ میں کیا ملتا ہے؟ مدرسہ میں اللّٰه کا علم ملتا ہے۔ جو کہ ہماری روح کی غذا ہے۔ ہمیں مدرسہ سے پتا چلا کہ یہ اللّٰه سبحان و تعالی کا علم ہے. سب سے پاکیزہ علم ہے۔ جو شخص تمام ادب و آداب کے ساتھ اور اس علم کو حاصل کرنے کی طلب کے ساتھ بیٹھتا ہے، اور جو اپنے دل کی صفاںٔی کرتا ہے اور اپنے آپ کو سنوارتا ہے، اللّٰه پاک اس کو یہ علم عطا کر دیتے ہیں۔ دل كى صفائی سے مراد ہے کہ دل سے تمام بری اور ناپاک عادتیں اور خصلتیں نکالی جاںٔیں اور ان کی جگہ پیاری خوبصورت اور پاکیزہ عادتیں اور خصلتیں اپنے اندر سموںٔی جاںٔیں . اور سنوارنا یہی ہے کہ دوسروں کے ساتھ اپنا ہر طرح کا اخلاقی رویہ خوبصورت کر لیا جائے۔
ہمارا دین ہم سے چاہتا ہے کہ ہم سنجیدگی، وقار اور متانت اپناںٔیں۔ بےہودہ مزاق اور بات بے بات ہنسی سے پرہیز کریں۔ سب سے زیادہ اپنے وقت کی قدر کریں۔ اس کو فضول نہ گنواںٔیں۔ ہم کو چاہیے کہ ہم اپنے وقت کو قیمتی بناںٔیں. كيونكه گيا وقت دوباره نہیں آتا۔ ہمارے خالق نے ہمیں دنیا میں کیوں بھیجا ہے۔ یہ ہمیں مدرسہ سے پتا چلا كه انسان دنیا میں بننے کے لیے آیا ہے۔ بنا ہوا انسان الله کی نظروں میں بھی قیمتی ہے اور اسکی مخلوق کی نظروں میں بھی قیمتی ہے۔انسان کا بننے سے مراد ہے ایمان اور اعمال کے حساب سے بننا۔ یعنی اس اعتبار سے بننا ہے کہ اللّٰه تبارك و تعالى اور اس کے رسول صل الله عليه وسلم كى محبت دل میں اس حد تک رچ بس جاۓ کہ ان کی اطاعت میں کوئی چیز بھی آڑے نہ آئے ۔ الله اور اس کے رسول کی مرضی ہماری مرضی بن جائے۔ اور ہماری مرضی فنا ہو جائے۔ کوئی بھی ماں کے پیٹ سے بن کر نہیں آتا۔ آدمی خود اپنی کوشش سے بنتا ہے ۔ شخصی ارادہ کا ہونا بہت ضروری ہے. اس علم کا مقصود یہ ہے کہ عمل کی زندگی ہو۔ یعنی جو بات بھی اللّٰه کے علم کے ذریعے حاصل ہو اس کو عمل میں لا کر اپنی زندگی کا حصہ بناںٔیں۔
الله تعالی سے دعا ہے کہ ہم سب کو مدرسہ اور الله کے علم کی اہمیت سے روشناس فرماںٔیں۔ اور اس كى طلب میں بے چين كر دیں . آمین۔ہمارے دلوں کو اس نور کے لیئےچن لیں ۔ اَللّٰهُمَّ اَتْمِمْ لَنَا نُوْرِنَا وَاغْفِرْلَنَا ذُنُوْبِنَا اِنَّكَ عَلٰى كُلِّ شَيْءٍ قَدِيْرٌ……اے میرے الله! ہمارے لئے ہمارا نور کامل کر دیجیے اور ہمارے گناہوں کو بخش دیجیے بےشک آپ ہر چیز پر قادر ہیں۔ آمین ثمہ آمین۔
اب اجازت، انشاءالله تعالیٰ جلد ملیں گے.
دعا:اَللّٰھُمَّ فَقِّھْنَا فِی الدِّیْن اے ﷲ! ہمیں دین کی سمجھ عطافرما ( بخاری)……اَللّٰھُمَّ اِنِّیْ اَسْئَلُکَ عِلْمًا نَّافِعًا وَّ رِزْقًا طَیِّبًا وَ عَمَلًا مُتَقَبَّلًا ……..اے ﷲ!میں آپ سے نفع دینے والے علم، اور پاکیزہ رزق اور قبول ہونے والے عمل کا سوال کرتی ہوں (مشکٰوۃ) اَللّٰھُمَّ انْفَعْنِی بِمَا عَلَّمْتَنِیْ وَ عَلِّمْنِیْ مَا یَنْفُعُنِیْ وَ زِدْنِی عِلْمًا …….اے ﷲ!جو آپ نے مجھے سکھایاہے اس کے ساتھ مجھے نفع دیجیئے اورمجھے وہ سکھایئے جو مجھے نفع دے اور میرے علم میں اضافہ کیجیئے۔ (ابن ماجہ)۔
فقط …..الله تعالیٰ کی پیدا کی ہوئی ايك زندگی

اپنا تبصرہ بھیجیں