ذرا سی بات – فرزانہ خورشید




رحمہ کو اس علاقے میں آۓ چند ماہ ہی گزرے تھے . اپنے نئے گھر کو اچھی طرح سے سیٹ کرنے میں اسے خیال آیا ، کہ جلد ہی نیۓ پڑوسیوں سے ملاقات کر لی جاۓ اور صفائی کے لئے ماسی کا انتظام بھی ہو جاۓ . اس سلسلے میں رحمہ نئی پڑوسن فرحت کے گھر پہنچ گئی .

رحمہ نے بتایا کہ ہم تھوڑے عرصے پہلے ہی ادھر شفٹ ہوۓ ہیں فرحت بہت پرتپاک انداز میں ملیں پھر ماسی کا ذکر نکلا تو پتہ چلا کہ انکے گھر کام والی آتی ہے ہے لیکن دیر سے …….. انھوں نے اسے بھیجنے کی حامی بھر لی پھر رحمہ اجازت چاہ کے اپنے گھر آگئ ماسی سے مل کر بات چیت کی رحمہ کو ماسی مناسب لگیں – ماسی نے بتایا کہ وہ یہاں بہت سے گھروں میں کام کرتی ہے اور بہت عرصہ گزر گیا ہے . ماسی روز کام کرنے آتی لیکن رحمہ اس سے صرفِ ضروری بات چیت کرتی . رحمہ نے محسوس کیا کہ اسے کسی بات پے ہلکا سا ٹوک دو بہت ناراضگی کا اظہار کرتی- رحمہ کے محلے میں ایک جگہ سے دعوت آئی رحمہ نے سوچا ضرور جاؤنگی اس طرح سب سے ملاقات ہو جاۓ گی . وہ مسز رحیم کے گھر قرآن خوانی میں گئیں …….. فرحت بھی موجود تھیں لیکن وہاں پے فرحت سمیت سب کے رویئے مختلف تھے .

رحمہ حیران تھی کہ کیا ہو گیا فرحت نے بتایا کہ ہمیں آپ ایسا سمجھتیں ہیں . رحمہ نے فرحت سے ناراضگی کی وجہ پوچھی تو بتایا آپ کے گھر حلیم بھیجا تھا . آپ نے کیا کہا تھا ، سب ماسی نے بتا دیا . پھر رحمہ کو ساری بات سمجھ میں آگئی . اس نے فرحت کو پیار سے دونوں ہاتھوں سے پکڑا جس وقت آپ نے حلیم بھیجا تھا اس سے پہلے میں اپنی بہن سے فون پے بات کر رہی تھی کہ حلیم اسکا گرمی کی وجہ سے خراب ہو گیا ، بس یہی بات ماسی نے کہا سن لی اور آپ کو بتا دی . باقی پڑوسنیں بھی حیران تھیں کہ ہمیں بھی ماسی نے آپ کے بارے میں اچھی راۓ نہیں دی تھی . بہت مغرور ہیں کسی سے بات کرنا پسند نہیں کرتیں .

رحمہ ہنسنے لگی اور کہا ماسی گھر گھر کی کہانی اپنے انداز سے بیان کرتی ہے جس کا ہم یقین کر لیتے ہیں . ہمارا المیہ یہ ہے کہ اس کی تصدیق بھی نہیں کر پاتے ، کیونکہ ہمارے آپس کے روابط کمزور ہوتے ہیں . رحمہ نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا آپ خود اس بات کا جائزہ لیں دوسروں کو کیوں موقع دیں ………

اپنا تبصرہ بھیجیں