شیطان – بنت شیروانی




دروازے پر بیل بجی . شازیہ آپا کے دروازہ کھولنے پر نوین کو موجود پایا ،جو ہاتھوں میں ایک پیکٹ لۓ کھڑی تھی ، یہ شازیہ آپا نوین کی بیان دینے والی آپا تھیں ، جن کے بیانات ، درس وہ اکثر سُنا کرتی تھی اور کہتی تھی کہ شازیہ آپا کیا درس دیتی ہیں۰کسی بھی مسئلے کو منٹوں میں حل کرا دیتی ہیں . کسی بھی بات کو اتنی اچھی مثال دے کر سمجھاتی ہیں کہ لمحوں میں وہ بات سمجھ میں آجاتی ہے۰اسی لۓ آج نوین شازیہ آپا کے گھر موجود تھی۰

شازیہ آپا نے نوین سے پوچھا کیا اٹھا کر لے آءیں؟؟؟ آپا کچھ نہیں بس آپ کے لۓ دوپٹہ لے کر آئ ہوں ۰اپنے ہاتھ سے آپ کے لۓ دوپٹہ پر کڑھائ کی ہے میں نے۰نوین نے خوشی سے بتایا۰ آج کے مصروف دور میں بھی ہاتھ سے کڑھائ کرنا اور وہ بھی کسی “دوسرے” کے لۓ۰ یہ نوین کی شازیہ آپا سے عقیدتومحبت کا بڑا ثبوت تھا۰ آپا آپ تو میرے ہاتھ کی پکی چیز یں اتنے شوق سے کھاتی ہیں ۰تو مجھے پتہ تھا یہ دوپٹہ دیکھ کر تو آپ بہت خوش ہوں گی . اور جب جب آپ یہ دوپٹہ پہنیں گی مجھے دعاؤں سے نوازیں گی۰آپ کے تو درس اتنے اچھے ہوتے ہیں۰آپ کا بیان تو دل پر اترتا چلا جاتا ہے . آپ کا مسئلوں کو چٹکی میں حل کروانا اور آپ کو میری باتوں کو غور سے سننا ۰اسی لۓ تو میں آپ سے اتنی محبت کرتی ہوں۰اور اسی لۓ اپنے ہاتھ سے کاڑھ کر آپ کے لۓ دوپٹہ لائی ہوں . کڑھائی کر کے دوپٹہ تو میں نے اپنی دیورانی کو بھی دیا تھا لیکن وہ کہنے لگی ۰اتنے “سادہ ٹانگے”۰یہ تو میری بیٹیاں بھی ٹانک لیتی ہیں۰آپ یقین کریں دل تو کرا کہ کہوں پھر اپنی بیٹیوں کے ہاتھ سے کڑھے دوپٹہ ہی پہن لیا کرو نا۰

ہفتے بھر پہلے میرے ہاتھ کے کڑھے ڈنڈی ٹانگے اور زنجیریں ٹانگے والے میرے دوپٹہ پر نظر یں کیوں جما رہی تھیں؟؟؟لیکن پھر یہ سوچ کر خاموش ہوگئ کہ “نا قدروں “کے کیا منہ لگنا . آپا میں تو کہتی ہوں کہ اللہ آپ جیسی خصوصیات وصلاحتیں مجھے بھی دے۰نوین اپنی محبت میں ساری باتیں کۓ جارہی تھی۰آپا نے نوین کے ہاتھ سے پیکٹ لیا اور اس میں سے دوپٹہ نکالا اور اسے طریقہ سے اوڑھ لیا اور مسکراتے ہوۓ اسے دعا دی کہ خدا تمھارے وقت میں برکت دے اور تمھارے اس ہنر میں مزید اضافہ کرے ۰نوین کے لب آمین کہنے کے لۓ ہلے کہ آپا نے کہا ۰نوین اگر تم بُرا نہ مانو تو ایک بات کہوں؟؟؟؟نوین نے ہنستے ہوۓ کہا “آپا اس سے پہلے کبھی کسی بات کا بُرا مانا ہے جو اب ایسا کروں”؟؟ آپا گویا ہوءیں کہ نوین کبھی مجھے بڑا ڈر لگتا ہے کہ ہم دانستہ یا نا دانستہ اپنی نیکیاں بتا کر یا جتا کر انھیں ضایع تو نہیں کر رہے ہوتے!!!نوین سمجھ گئ تھی کہ آپا کا اشارہ دیورانی کو دۓ گۓ دوپٹہ کی طرف ہے لیکن آپا کا انداز اتنا حکمت سے بھرا تھا ک ہ نوین کو اپنی بے عزتی محسوس نہی ہوئی اس کے بعد

آپا نے اتنے میں میز پر رکھا کاغذا ور قلم اٹھایا اور کچھ لائنیں بنا ڈالیں جنھیں سیندری کہا جا سکتا تھا۰نوین نے ان لاءنوں کو دیکھتے ہی کہا آپا آپ کی تو ڈرائنگ بھی بہت اعلی ہے۰ آپا نے بہت غور سے نوین کو دیکھا اور اس کے بعد ان لاءنوں کو دیکھتے ہوۓ بولیں ۰نوین یہ جو درس دینے والے ،بیان دینے والے،کچھ لکھنے لکھانے والے ،اسٹیج پر تقریریں کرنے والے ہوتے ہیں نا ان پر شیطان کا بہت بڑا گھیرا ہوتا ہے،شیطان انھیں بہت زیادہ تنگ کرتا ہے،ان پر حاوی ہونے کی بہت کوشش کرتا ہے کہ وہ جانتا ہے کہ اچھے کاموں کو کرنے کا بڑا اجر ہے لہذا وہ اس اجر سے محروم رکھنے کی بھر پور کوششش کرتا ہے۰ اب آپا نے پینسل کی نوک کو کاغذ پر دبایا اور بولیں۰ نوین شادی کی تقریب میں بھی افراد کی نظریں اسٹیج پر موجود افراد پر ہی ہوتی ہیں نا!!!!!! یا پھر افراد ایک دوسرے کو دیکھتے ہیں۰اس بات کو کوئ نہیں سوچتا کہ اس ہال کی ڈیکوریشن میں،ان میز کرسیوں پر کور چڑھانے میں کتنے افراد نے محنت کی۰

کسی کو نہیں پتہ ہوتا کہ کہ یہ میز کرسیاں لگانے و آلے افراد میں سے کون کون بیمار تھا اور اس کے باوجود انھوں نے کام کۓ ۰ان افراد کے بارے میں کسی کے بارے میں کسی کے ذہن میں نہیں آتا . دیکھتے سب اسٹیج پر نظر آنے والے افراد کو ہیں۰ شازیہ آپا میں اسی لۓ درس دینے کا کام نہیں کرتی۰پتہ نہیں لوگ درس و تدریس کا کام کیوں کرتے ہیں۰؟؟؟

نوین …… اللہ کا حکم ماننے کے لۓ”اسی لۓ تو شیطان انھیں زیادہ تنگ کرتا ہے. کبھی کہتا ہے چھوڑ دو یہ کام ، کبھی ستائشی و تعریفی جملے سننے کی خواہش پیدا کرتا ہے .کبھی یہ دماغ میں لاتا ہے دیکھو تمھاری کتنی واہ واہ ہورہی ہے، کتنی تعریفیں ہو رہی ہیں اور پھر ان تعریفوں کا اتنا عادی بنا دیتا ہے “کہ تنقید “کو برداشت کرنا مشکل کر دیتا ہے۰اور ایسے میں اپنا مزید حملہ تیز کرتا ہے اور بسا اوقات وہ درس دینے والے فرد کے ذہن میں لاتا ہے کہ میں تو اس پیدا کرنے والے کا “حکم”سمجھ کر یہ ذمہ داری نبھا رہا تھا ۰میرے دل میں لوگوں کو خوش کرنے اور لوگوں میں اپنی واہ واہ کرنے کی لت کیسے لگ گئی؟ تو پتہ ہے ایسے وقت میں وہ تم جیسی محبت کرنے والی کے سامنے یہ بات زبان سے نکلو اتا ہے کہ دُعا کرو “رب کی بارگاہ میں قبول ہو جاۓ”۰کہ نوین بھی کہ دے کہ اتنا کچھ کرنے کے باوجود ڈرتی رہتی ہیں کہ پتہ نہیں اعمال قبول ہوں گے کہ نہیں …… بڑی نیک بی بی ہیں۰ نوین یہ اسٹیج پر نظر آنے والے افراد پر شیطان اپنی نظریں بھی جماۓ رکھتا ہے۰کہ جہاں موقع ملے اور وہ ان کے اعمال کو صفر پر لےآۓ.

شاید اسی لۓ وہ پیچھے درسوتدریس کی محفلوں میں چاندیاں بچھانے والے ، کرسیاں رکھنے والے اور اس انٹرنیٹ کی دنیا میں documentation اور presentation بنانے والےافراد بہت “قیمتی “ہیں۰اور شازیہ آپا دعاکرنے لگیں یارب تو اپنے ان ناتواں بندوں کے اعمال کو ریا کاری اور شرک خفی سے بچانا،ان کے لکھے اور بولے الفاظ کو ان کے خلاف نہ بنانا،ان کی کوتاہیوں سے درد گزر کرنا اور ان سے راضی ہوجانا ان سے راضی ہوجانا۰ کیوںنکہ یہ سامنے نظر آنے والے افراد کا بھی “شیطان “بہت بڑا دشمن ہے۰

اپنا تبصرہ بھیجیں