برتن – بنت شیروانی




رخسانہ کو کسی بات پر غصہ آۓ یا نا آۓ ….. لیکن کسی برتن کے ٹوٹنے پر وہ غصہ میں آگ بگولہ ہو جاتی۰اور برتنوں کی خریداری میں اس کی چوائس بھی لاجواب تھی۰
ہر برتن اسے پسند نہ آتا اور وہ ہمیشہ یونیک ڈیزائین کے برتن خریدتی اور وہ بھی صرف مخصوص برتنوں کی دکانوں سے۰یہاں تک کہ گھر کے استعمال کے روزمرہ برتنوں کی خریداری میں بھی اچھی کوالٹی کے ساتھ اچھا ڈیزائین بھی دیکھتی …… آج ہوا یوں تھا کہ رخسانہ جس کپ میں سبز چاۓ پیا کرتی تھی۰وہ اُس کی بیٹی ریحانہ کے ہاتھ سے برتنوں کو رکھتے وقت ٹوٹ گیا تھا۰اب اس ٹوٹے کپ کو تو جوڑنا اُس کے بس سے باہر تھا کیونکہ وہ کرچی کرچی ہو کر ٹوٹا تھا ….. لہذا ریحانہ نے اپنے دکھے دل کے ساتھ بڑی آپی کو فون گھما ڈالا اور خیر خیریت بھی پوچھنے سے پہلے بول اٹھی ۰چھوٹی آپی یہ بتائیں کہ گل سینٹر (کراچی کی مشہور برتوں کی مارکیٹ)کب کھلے گی؟ اور یہ کہ چھوٹی آپی یہ گل سینٹر والے اور تمام برتن بیچنے والوں کو کتنا نقصان ہو رہا ہوگا ؟ اب یہ کیا برتن مہنگے بیچیں گے؟ اور کیا ہمیں قیمتیں کم کرانے کے لۓ کیا مزید مغز ماری کرنا پڑے گی؟ کیا دکان دارمارکیٹ کھلنے پر پہلے اپنا پرانا سامان ختم کریں گے ؟ یا نیا مال پہلے لائیں گے؟؟؟؟
بڑی آپی جو اپنی بہن کو بہ خوبی جانتی تھیں پوچھ بیٹھیں کیا ٹوٹا آج گھر میں؟ وہ میرا سبز چاۓ پینے والا کپ جس پرابھی رخسانہ اپنا جملہ مکمل کرتی اور اس کی تعریف میں کئ سارے جملے کہتی کیونکہ بڑی باجی تو برتنوں کو صرف ضروریات زندگی سمجھ کر صرف استعمال کرنے خواہاں تھیں ،اُن کی خریداری کو بھی سر پر سوار نہ کیا کرتی تھیں۰بول اٹھیں اچھا تو سبز چاۓ کا کپ خریدنے کے لۓ گل سینٹر جانا ہے؟ ارے بڑی باجی خالی کپ تھوڑی خریدنا ہے میں توڈنر سیٹ خریدنے کا سوچ بیٹھی ہوں۰ریحانہ نے مسکراتے ہوۓ کہا …… یہ سُن کر بڑی باجی کہنے لگیں رخسانہ تمھاری یہ خواہش ایسی ہی ہے جیسے کوئ اچھا کھانا پکانے والی عورت یہ خواہش کرے کہ میرے جنازے پر آنے والے تمام افراد میرے ہاتھ کا پکا کھانا کھائیں ۰یہ ڈنر سیٹ کی بھی تمھارے پاس کوئی کمی ہے ؟ باجی کیا بات کی تم نے…… ویسے اگر کراچی کی خواتین کا انتقال ہو تو لوگوں کو گھر کی بنی مزیدار سی بنی بریانی ملا کرے گی کہ کراچی کی تقریباً تمام خواتین کا بریانی پکانے میں کوئی ثانی نہیں اور لوگ جنازے پڑھ تدفین سے فارغ کو کر کھانا کھانے بیٹھیں گے تو انگلیاں چاٹتے رہ جائیں گے اور لاہور کی خواتین کے انتقال میں مرحومہ خواتین کے ہاتھ کے بنے مزیدار پاۓ اور مغز ملا کر یں گے٠
یہ سُن کر بڑی باجی نے کہا بہن یہ خواہشات تو پوری نہیں ہو سکتیں …… اسی طرح ہر اچھا برتن دیکھ کر اسے اپنا دل دے بیٹھنا اور اسکے بعد اسے خریدنا نا تو نا ممکن ہے تو تُم ایسا کیا کرو جب بازار جاؤ تو داخل ہونے سے پہلے بازار میں چوتھا کلمہ پڑھ لیا کرو اور بازار میں گھومتے وقت ربنا اتنا فی الدنیا والی دعا پڑھتی رہا کرو ورنہ تو تمھارا حال تو یہ ہے کہ…..ہزاروں برتن ایسے کہ ہر برتن پر دم نکلے ….. بہت خریدے رخسانہ نے برتن لیکن پھر بھی کم نکلے۰
یہ سُن کر رخسانہ نے بازار میں داخل ہونے سے پہلے چوتھا کلمہ اور بازار میں چلتے وقت رانا والی دُعا پڑھنے کا ارادہ کیا۰
تو پیاری دوستوں جب مارکیٹس کھل جائیں گی اور آپ بازار جائیں گی توآپ بھی یہ عمل کریں گی؟؟؟؟؟؟؟

اپنا تبصرہ بھیجیں