“صومالیہ سے امریکی فوجیوں کا انخلا قابلِ افسوس فیصلہ ہے” – Urdu News – Today News




صومالیہ نے امریکا کے فوجی انخلا کے فیصلے کو قابلِ افسوس قرار دیتے ہوئے نئے امریکی صدر جوبائیڈن سے اقتدار میں آنے کے بعد فیصلے پر نظرِ ثانی کرنے کی درخواست کردی۔

غیر ملکی ذرائع ابلاغ کے مطابق امریکی فوج کی افریقی کمان (افریکوم) کے 650 سے 800 کے درمیان فوجی اہلکار صومالیہ میں موجود ہیں۔ ان اہلکاروں میں اسپیشل فورس بھی شامل ہے جو صومالیہ کے فوجی اہلکاروں کی عسکری تربیت میں مدد کر رہی ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے صومالیہ سے امریکی فوجیوں کے انخلا کا فیصلہ کیا ہے۔ امریکی دفاعی ادارے پینٹاگون کا کہنا ہے کہ سال 2021 کے آغاز ہی میں فوجیوں کا انخلا شروع کردیا جائے گا۔

صومالیہ کے حکام کی جانب سے امریکی فیصلہ پر کوئی ردعمل نہیں آیا۔

تاہم صومالیہ کے ایک سینیٹر ایوب اسمائیل یوسف کا کہنا ہے کہ صومالیہ سے امریکی فوج کے انخلا سے ان تمام کامیابیوں پر پانی پھڑ جائے گا جو انہوں نے دہشت گرد تنظیمیوں کے خلاف حاصل کیں۔ امریکی فیصلہ قابلِ افسوس ہے۔

سینیٹر نے کہا کہ امریکی فوجیوں نے صومالیہ کے فوجیوں کی تربیت میں بڑا تعاون کیا جس سے صومالین فوجیوں کی عسکری صلاحیتوں میں کافی اضافہ ہوا۔

ایوب اسمائیل یوسف نے یہ بیان اپنے ایک ٹوئٹ کے ذریعے دیا جس میں انہوں نے نئے امریکی صدر جوبائیڈن کو بھی مینشن کیا۔

صومالیہ میں رواں ماہ پارلیمانی انتخابات شیڈول ہیں جب کہ فروری 2021 میں عام انتخابات بھی ہونے ہیں۔

The decision by @POTUS to remove the US security forces from #Somalia is untimely. The fight against global terrorism is still ongoing and we must still win this battle for peace and security to prevail. We must not give up on our successes @US2SOMALIA @JoeBiden @RepAdamSmith

— Sen. Ayub Ismail Yusuf (@AyubIsmailYusuf) December 5, 2020

اپنا تبصرہ بھیجیں