طارق عزیز کا سلام اور نیلام گھر – بنت مناظر




“دیکھتی آنکھوں، سنتے کانوں کو طارق عزیز کا سلام پہچے………”، یہ جملے ہمارے بچپن سے لڑکپن تک کانوں میں گھونجتے رہے۔ ریکارڈ پروگرام رہا ……. جس کا نام تھا ” نیلام گھر” صاف ستھرا پروگرام ۔ سوالات ، معلوماتی دلچسپ پہلییاں ، کوئز ،حالات حاضرہ ، شعرو شاعری ، نامور شخصیات کے انٹرویو ، یعنی کوزے کو دریا میں بند کر نے کا سہرا صیحح معنوں میں طارق عزیز صاحب کو جاتا ہے۔
ان کے اس پروگرام کا مقابلہ موجودہ دور کے دو ٹکے کے کوئز پروگرامات سے نہی کیا جاسکتا۔ آج کے ٹاک شوز میں انتہائی کم فہمی ، کم علمی ، معاشرتی پہلو و اصلاحی پہلو کا فقدان نظر آتا ہے ……جن سے ہمارا معاشرہ مزید زوال پذیرہے۔ چھچھورہ پن و رشتوں کی پامالی موجودہ ٹاک شو کا اعزاز ہے۔ طارق عزیز کا یہ پروگرام روایات کی منتقلی کے لئے ٹاپ پروگراموں کی فہرست اول میں شمار ہوتا ہے۔
اللہ آنے والی نسلیں اس سنتے کانوں ، دیکھتی آنکھوں سے اچھے اور مثبت ٹاک شو سے سود مند تفریح حاصل کر سکیں۔ یقینا طارق عزیز کا نام روشن حرف سے لکھا جائے گا۔ ان کے سفر آخرت کے لئے ان کے پروگرام کے مثبت جملہ توشہ آخرت ثابت ہوں۔
اور نیلام گھر کا آخری نعرہ …….. رگ وجان کو ہلا دیتا تھا ۔ پاکستان کا بچہ / بڑا ٹیلی وزن کے آ گے کھڑے ہو کر جواب دینا اپنا فخر سمجھتا تھا۔ “پاکستان زندہ باد “! طارق عزیز کا نام تاریخ میں تا حیات روشن رہے گا۔ آمین۔

اپنا تبصرہ بھیجیں