ہمیں ایمان کا مزہ چکھا دے مولا! – زبیر منصوری




دل پر ہاتھ رکھ کر ایمانداری سے سچ سچ بتائیں۔۔!

جب خدانخواستہ اچانک کوئی پریشانی اور مشکل آن پڑے تو مدد مانگنے کے لئے دل میں پہلا خیال اللہ کا آتا ہے یا کسی دوست یا عزیزکا؟ جب بیمار پڑتے ہین تو شفا کے لئے سب پہلے دوا و ڈاکٹر کی طرف جاتے ہیں یا پہلے اللہ کی طرف؟ جب روزگار یا جاب کے لئے کوشش کرتے ہیں تو بھروسہ ڈگری اہلیت تعلقات اور کوشش پر ہوتا ہے یا بس اللہ پر؟ خدانخواستہ کوئی حادثہ ہو جائے تو مدد کے لئے پہلا خیال اللہ کا آتا ہے یا کسی بھائی اور دوست کا؟ دل میں سب سے پہلی اور گہری محبت اللہ کے لئے محسوس کرتے ہیں یا کسی اور کے لئے ؟ دل میں پہلا اور شدید خوف بس اللہ کا ہے یا دل ہر طرح کے خوف و خدشات کی جھاڑیوں اور کانٹوں سے پٹا پڑا ہے ؟

اپنے اور اولاد کے آنے والے کل کے لئے سارے خاکے منصوبے اپنی قوت بازو ذہانت اور سمجھ سے بنا رکھے ہیں یا بس اللہ کی قوت کے سہارے جینے کا پروگرام ہے؟اور کوشش اس لئے کہ اس اللہ نے کوشش کا کہا ہے بس صرف اس لئے ۔ ممکن ہو تو میں اور آپ اس چیک لسٹ کو اپنے اپنے حساب سے اور پھیلا لیں ،کہیں گھر کی الماری ہر لگا لیں یا فون و کمپیوٹر کی ڈیسک ٹاپ پر آویزاں کر لیں یا کسی دوست کے ساتھ ایک دوسرے کو اللہ کے لئے یاد دہانی کرواتے رہنے کا وعدہ کر لیں ۔ پھر اسے روز پڑھ کر خود کو ایمانداری سے مارکس دیں اوراگر پاس ہو رہے ہوں تو شکر ورنہ فکر کریں۔۔

چند دن کی یہ مسلسل ایکٹی وٹی ممکن ہے ہمیں اللہ پر دل کی گہرائیوں سے کسی صافی چشمے کی طرح پھوٹتے ،میٹھے ،گہرے ،شدید اور محبت سے شرابور کر دینے والے ایمان کا مزہ چکھا دے ، شرک سے بچاتے ہوئے خالص توحید سے جوڑ کر جنت کے راستے پر ڈال دے۔۔۔ ممکن ہے۔۔!

اپنا تبصرہ بھیجیں