آزادی ایک عظیم نعمت – اریبہ اسد خان




تمام پاکستانیوں نے ہر سال کی طرح اس سال بھی کورونا وبا کی موجودگی کے باوجود بھی “یومِ آزادی پاکستان” انتہائی جوش وجذبہ کے ساتھ منایا ۔ یہ دن میرے تمام عزیز ہم وطنوں کے لیے انتہائی اہم اور باعثِ فخر ہے کیونکہ آج سے ۷۳ سال پہلے ۱۴ اگست ۱۹۴۷ء کو ا للّٰہ ربّ العزت نے ہمیں اس عظیم نعمت سے نوازا جو کہ بے انتہا محنت ، کوشش، جدوجہد اور لازوال قربانیوں کے بعد حاصل ہوئی اور ان قربانیوں کے نتیجے میں ہمیں پیارا اور خوبصورت ملک پاکستان ملا.
جس کا ہم جتنا شکر ادا کریں کم ہیں . مگر سوچنے کی بات یہ ہے کہ ہم کہیں اپنے شہداء کی عظیم اور بیش بہا قربانیوں کو ضائع تو نہیں کر رہے؟ جنہوں نے آزادی جیسی نعمت دلانے کے لیے اپنا سب کچھ لٹادیا جس نعمت سے آج بہت سے مسلم ممالک محروم ہیں حتیٰ کہ ہماری شہہ رگ کشمیر جیسی جنت نظیر وادی بھی بد قسمتی سے قیام پاکستان کے اتنے سال بعد بھی آزاد نہ ہو سکی۔اللّٰہ نے ہمیں اتنا پیارا ملک جو بے انتہا وسائل سے مالا مال ہے اور چاروں موسم، بہترین سمندر، پہاڑ ، بندر گاہیں ، قدرت کے خوبصورت اور حسین قدرتی مناظر اس ملک کو عطا ہیں اور تو اور ہمیں ایک ایٹمی پاور بھی بنایاہے ۔ ہمارا فرض ہے کہ ہم ﷲ کی اس عظیم نعمت کا حق اسی طرح ادا کریں جیسا کہ اس کا حق ہے یعنی اس سرزمینِ اسلام کو انہی کاموں کے لیے استعمال کیا جاۓ جنہیں ﷲ تعالٰی پسند کرتا ہے۔
ہمارا ملک پاکستان اسلام کے نام پر بنا ہے جس کی اساس کلمہ لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہ ہے اور اس ریاست کے قیام کا مقصد یہ ہے کہ ہم اس ملک میں آزادی کے ساتھ رہ سکیں اور یہ ملک ہماری تہذیب وتمدن کی روشنی میں پروان چڑھے اور اس میں اسلامی اصولوں پر مبنی نظام پر عملدرآمد ہوسکے اور یہ پاک وطن اپنی اصل اساس کے مطابق ترقی کی راہ پر چل سکے۔ لہذا ہمیں چاہیۓ کہ اپنے رب کی عطا کردہ اس انمول آزادی جیسی نعمت کا شکرانہ ادا کرتے ہوۓ اپنے ملک کے لیے کچھ نہ کچھ کریں .
اور اسکی ترقی وخوشحالی میں اور اس میں اسلامی اصولوں کو پروان چڑھانے میں اپنی بھرپور جدوجہد اور کوشش کریں تاکہ ہم اپنے عظیم مفکّر علامہ اقبال کے خواب کو تعبیر دے سکیں اور اپنے عظیم رہنما قائد اعظم کی کوششوں کو آگے بڑھائیں اور ہمیشہ اپنے رب کے احسان مند رہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں