پھوکوں سے یہ چراغ بھجایا نہ جائے گا – سمیرا غزل




اے اللہ …… ! ہم پر اپنا رحم فرمائیے اور بارش کو ہمارے لیے نفع بخش بنا دیجیے ۔ در حقیقت بارش تو اللہ تعالی کی طرف سے ہے ہی ایک رحمت اور نفع بخش ، اس کو زحمت نا اہلوں کی نا اہلی اور انتظامیہ کی بد انتظامی بناتی ہے ۔ وہی نا اہل ، جنہیں مسند اقتدار سے چمٹے رہنے کے لیے عوام کی خدمت کا سفر برداشت نہیں ہوتا اور خدمت کے علمبردار ان کی آنکھوں میں کانٹے کی طرح کھٹکتے ہیں ….
جس کی تازہ ترین مثال عبدالرشید بھائی کے گھر حملہ ہے ۔ اس بات کا اندازہ بہت پہلے ہی کر لیا تھا کہ یہ سب اتنی آسانی سے ہضم نہیں کیا جائے گا . ہر دور میں ظلم برداروں نے قلم کتاب اللہ کی تلوار اور بیلچے اٹھانے والوں کو روندنے کی کوشش کی ہے ، مگر کیا پھونکوں سے خدا کے چراغ بجھائے جا سکتے ہیں ؟ ہاں مگر اس سب سے ان سب کے سیاہ چہرے صاف نظر آجاتے ہیں . جنھوں نے اپنے منہ پر نقاب چڑھا رکھے ہیں یا پھر ملمع سازی کی ہوئی ہے۔ سو بارش نے یہ ملمع دھودیا ہے۔ یہ کہیں ایوانوں میں ہیں …… یہ کہیں ایوانوں سے باہر آئے ہیں ……. یہ کہیں بظاہر لٹے پٹے بے خانماں نظر آتے ہیں مگر ان تجوریاں بھری ہوئی ہیں .
دہشت گردی پھیلانے کے لیے یہ کہیں رہنما کھو کر منزل سے الجھ بیٹھے ہیں . یہ اس ماتم کنائی میں باصفا لوگوں سے الجھیں گے اور یہ وہی ہیں جنھوں نے پہلے بھی باپردہ خواتین کا لحاظ نہیں کیا اور نہ ہی بچوں کو بخشا ! لہذا ان سے سخت ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے کہ وقت اب اور بھی بدل گیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں