میرا خوددار کراچی – صدف عنبرین




یہ میرا درد تھا تم نے تو اسکو افسانہ بنا دیا
گرد،بےنیازی کی ڈال کرحقیقت کوفسانہ بنادیا
شہرِ قائد ریکارڈ بارشوں کی زد میں ہے ،ٹوٹی سڑکیں یہ بوجھ اٹھانے سے قاصر تھیں سو پہلے ریلے میں ہی بہہ گئیں ہیں ،بڑی شاہراہیں بڑے بڑے شگاف کے ساتھ بے بس درجنوں موٹر سائکل سواروں کو گرتا مرتا دیکھ رہی ہیں۔ شہری انتظامیہ تو خیر چار سال میں کہیں نظر نہیں آئی تو ان آخری دنوں میں کیا دکھتی یقینا کہیں بھیٹی اگلے الیکشن کی تیاری میں مصروف نوحہ گری کررہی ہوگی، وہ اس کے علاوہ کر بھی کیا سکتی ہے۔
وفاق کی سانسیں تو اس دن سے رکی یوئی ہیں جس دن سے ابر باراں نے شہر کراچی کا رخ کیا ہے اور جب تک رکی رہیں گی . جب تک وزیر اعظم صاحب کا بے نیاز اور بے فکر سا ایک ٹوئٹ نہ آجائے !! پھر سب جاگ جائیں کے سب گمشدہ فورس سوشل میڈیا کے خیالی میدان میں سرگرم نظر آئیں گے ، خیر وزیراعظم صاحب کا کراچی سے کیا واسطہ؟؟ عارف علوی صاحب بیچارے شاید صاحب فراش ہوچکے ہیں . عمران اسمائیل صاحب فراموش ہوچکے یا نہیں بھی ہوئے تو کراچی کے لیے یہ تلاش گمشدہ کی فہرست میں ہیں ، عالمگیر صاحب کی تو سیٹ ملنے کے بعد کی تبدیلی سے سب واقف ہی ہیں تو اس پہ بات کرنا فضول ہے ، کراچی پھر سے سائیں سرکار سے امید لگائے بھیٹا تھا یہ وہی سندھ گورنمنٹ ہے جو بارہ سال سے صوبہ کا حال بے حال کرنے میں تن تنہا مصروف ہے .
سب زیادہ ٹیکس دینے والے شہر میں پچھلے چار دنوں میں ٹرانسپورٹ نام کی کوئی چیز میسر نہیں ہے ، بارش ، گٹراور نالوں کا جو پانی دو دن پہلے گھروں میں داخل ہوا وہ تا حال نہیں نکالا جاسکا ہے۔ لوگ چھتوں پہ پناہ لیے ہوئے ہیں، نکاسی آب کا کوئی نظام نہیں ہے . ایسے حالات ہر جگہ پیش آتے ہیں مگر اس کے لیے کچھ پلان ہوتا ہے یا پہلے سے شہر اس کو سہنے کی ہمت رکھتا ہے کہیں بھی حکومت کبوتر کی طرح آنکھیں نہیں بند کرتی ہے ۔ کراچی مضبوط اور خودار قوم کا شہر ہے نہ وہ اپنے احسان جتائے گا اور نہ ہی اپنے کو مظلوم ثابت کرکے صرف نوحہ گری کرے گا وہ آج بھی سڑکوں پہ اپنی مدد آپ کے تحت لوگوں کو ریسکیو کررہا ہے،گھروں پہ کھانے پہنچارہا ہے،ناگن سے سرجانی تک شہر کی سب سے بری حالت والے علاقے میں شٹل سروس چلارہا ہے،گلستان جوہر کی لینڈ سلائیڈنگ میں لوگوں کو ہاسپٹل پہنچارہا ہے،رات بھر اپنے جوان شہر کی گلی گلی میں بھیجے ہوئے ہیں کہ کہیں کسی کو مدد کی ضرورت ہو تو تم حاضر ہو۔
یہ جماعت اسلامی ہے شہر کراچی کا اصل چہرہ ،شہر کراچی کے اپنے بیٹے الخدمت کے روپ میں دن رات خدمت میں مصروف ہیں ان کو اس سے سروکار نہیں کہ ملک نے وفاق نے صوبے نے سرکار نے ان کو کیا دیا وہ اپنی مدد آپ کے تحت کراچی کو پھر سے بارونق اور سب مجبوروں کی پناہ گاہ بنانے میں ہر عزم ہیں۔ کیونکہ کراچی تو دیتا ہے لیتا نہیں۔
جیو میرے خوددار کراچی …….. جیو جماعت اسلامی ……. جیو الخدمت …….. شکریہ الخدمت

اپنا تبصرہ بھیجیں