رابطہ کی فہرست – افشاں نوید




واٹس ایپ پر جس ساتھی کے نمبر سے میسیج موصول ہوئے اس کے انتقال کو چھ ماہ گزرچکے ہیں ۔آنکھیں جھپکا کر باربار نام پڑھا جب یقین ہوگیا کہ مرحومہ کے نمبر سے میسیج آئے ہیں تو علم ہوا کہ انکی بیٹی کے پیغامات ہیں جو کالج کی طالبہ ہے۔سادہ سے دعاسلام کے میسیج کے ساتھ درج تھا کہ
“امی کی سہیلیوں سے رابطہ کرکے امی کی باتیں کرنا اچھا لگتا ہے۔”

کچھ روز قبل ایک اور ساتھی کے نمبر سے کال آئی جن کے بارے میں علم ہواتھا کہ وہ تشویش ناک حالت میں آئی سی یو میں ہیں۔دل خوش ہوا اسکرین پر نام دیکھ کر کہ ماشاء اللّٰہ بہتر ہوگئی ہوگی کیفیت جو فون کیا۔ فون پر انکی بہو تھیں۔ بولیں ، امی(ساس) کا موبائل میرے پاس ہے ۔کانٹیکٹ لسٹ نکالی کہ امی سے جو محبت کرنے والے ہیں ان سے دعا کی درخواست کردوں۔ ایک اور ساتھی جن کے انتقال کو کئی برس گزرے انکے نمبر پر میں نے کال کی کہ اگر بند نہیں ہوا تو گھر والوں کی خیریت پوچھ لوں گی۔ بیٹی نے فون ریسیو کیا۔بولی یہ فون میں اپنے ساتھ لے آئی کہ امی کا نمبر بند نہیں ہونے دونگی۔کیا پتہ کوئی امی کی ساتھی انھیں یاد کرکے رابطہ کر لیں۔ ویسے میں بھی امی کی دوستوں سے سلام دعا کرتی رہتی ہوں بالخصوص امی جن کا بہت ذکر کرتی تھیں۔۔۔ المختصر یہ کہ یہ والدین کی کانٹیکٹ لسٹ آپ بھی سنبھال کر رکھئے گا۔۔۔۔۔

حق تو یہ ہے کہ والدین کے دوستوں کا احترام والدین کی زندگی میں بھی کیا جائے۔ اگر ماں کو بیٹے کا وقت درکار ہے کسی سہیلی کی عیادت یا ملاقات کو جانے کے لیےیا باپ کو دوستوں سے ملنے کے لیے ،تو وقت نکالیں کہ والدین سے جڑے رشتوں کی قدر بھی ایمان کی علامت ہے۔ہماری شریعت کی حساسیت بھی کچھ ایسی ہی ہے کہآپ صلی اللہ علیہ وسلم حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا کی وفات کے بعد ان کی سہیلیوں کو تحفہ بھیجتے اور سوال کیا جاتا ہے کہ باپ کے مرنے کے بعد اس کا بھائی بھی نہ ہو تو میرے حسن سلوک کا مستحق کون ہے جواب دیا جاتا ہے۔۔تیرے باپ کا دوست۔روایات میں ھے کہ دوران سواری ابن عمر رضہ سواری سے اتر کر پیدل چلنے والے کو سواری پیش کرکے خود باگیں تھام لیتے ہیں۔ سوار کی شرمندگی مٹانے کو کہتے ہیں کہ مجھے یاد آیا کہ میرے مرحوم باپ کا تمہارے باپ سے دوستی کا رشتہ تھا۔رشتے نبھانے کے لیے ہیں،جانے والے رشتے ساتھ لے کر نہیں جاتے۔

کچھ لوگ تو رحم کے رشتوں سے بے نیازی برتنے لگتے ہیں والدین کا سایہ اٹھنے کے بعد اور کہیں۔۔۔۔۔ ایک سولہ برس کی بچی ماں کی دوستوں کو ڈھونڈ رہی ہے انکی رابطوں کی فہرست میں کہ ماں کی دوستوں میں ماں کی مہک محسوس کرتی ہے اس لیے کہ مائیں تو سانجھی ہوتی ہیں۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں