Home » ماہ صفر– بھاری مہینہ ؟ اسماء معظم
بلاگز

ماہ صفر– بھاری مہینہ ؟ اسماء معظم

ٹنگ۔۔۔۔۔۔۔ ٹونگ۔۔۔۔۔۔۔۔دروازے کی بیل بجی۔ بیل کی آواز سن کر پوچھا کون۔۔۔۔۔۔۔؟ میں ہوں شازیہ ۔۔۔۔۔۔ثمینہ دروازہ کھولو۔ شازیہ نے کہا ارے شازیہ تم۔۔۔۔آٶ آٶ۔ ثمینہ نے کہا۔جو رات کا کھانا پکانے کی تیاری کر رہی تھی۔ دونوں نے ایک دوسرے سے سلام دعا کی۔ اس کے بعد شازیہ نےکہا ثمینہ کل جمعہ کے دن ناٸلہ کے گھر شام 4 بجے سورہ المزمل کا ختم ہے تم ضرور آنا ۔۔۔ ناٸلہ نے کہا تھا میں تمہیں بھی کہ دوں میں یہی کہنے آٸی تھی

اور ہاں دیکھو تم سورہ المزمل پر درس بھی دے دینا ہم لوگ سورہ المزمل پڑھتے تو ہیں لیکن اس کا مطلب جاننے کی کوشش نہیں کرتے ہمیں پتہ نہیں چلتا کہ اس میں کیا باتیں بتاٸی ہیں ہمارےرب نے۔ تم درس دو گی تو سب کو ترجمے و تشریح سے اس کا مطلب بھی پتا چل جاۓ گا اور غوروفکر کا موقع بھی ملے گا۔ ٹھیک ہےمیں ضرور درس دے دونگی انشآللہ۔۔۔۔۔۔۔ ثمینہ نے کہا۔ اچھا رکو شازیہ چاۓتو پیتی جاٶ ۔ ثمینہ نے انتہاٸی محبت سے کہا۔ چاۓ ۔۔۔۔۔۔۔۔؟تمہیں تو پتہ ہے نعمان شام کی چاۓ ضرور پیتے ہیں اور وہ اسوقت گھر آگۓ ھوں گے میں پھر آٶنگی۔ اچھا تو اگلی دفعہ چاۓ ضرور ۔۔۔۔۔ثمینہ نے زور دے کر کہا۔ ارے صرف چاۓ ہی نہیں بلکہ واۓ بھی۔ یہ کہہ کر دونوں زور سے ہنسیں۔شازیہ اور ثمینہ اپنے اپارٹمینٹ کی بہت گہری سہیلیاں تھیں – جب شازیہ اس اپارٹمینٹ میں شفٹ ہوٸی تو صرف ثمینہ ہی اس اپارٹمیٹ میں تھی باقی تمام فلیٹ خالی تھے یہی وجہ تھی کہ ان دونوں میں خوب گھری دوستی ھو گٸی۔ اور کیوں نہ ھوتی گہری دوستی ثمینہ نے شازیہ کے آنے پر اسکا خیال بھی تو بہت رکھا تھا۔چاۓ پانی کا پوچھا دو دن کھا نا پکا کر بھیجا ماسی لگواٸی اور روانہ اس سے پوچھنے آتی کہ کسی چیز کی ضرورت تو نہیں، یہی وجہ تھی ک شازیہ ثمینہ پر فریفتہ ھو گٸی ۔ جمعہ کا دن بالاآخر آن پہچا ثمینہ تیار ہو کر ٹھیک 4 نجے ناٸلہ کے گھر پہنچ گٸ۔

وہاں شازیہ پہلے سے موجود تھی۔ ناٸلہ نے اپنی سہیلیوں کا استقبال انتہاٸی گرم جوشی سے کیا۔ ثمینہ نے عبایا اتارا اور ایک نظر کمرے میں دوڑاٸی دیکھا تمام خواتین خوش رنگ لباس میں ہیں۔ سب کے ہاتھ میں سورہ المزمل ہے وہ سور المزمل پڑھتی جاتی ہیں اور پلیٹ میں آٹے کی بنی چھوٹی چھوٹی گولیاں تھیں۔ جب ایک دفعہ سورہ المزمل کوٸی خاتون پڑھ لیتی تو اس پلیٹ میں سےایک گولی اٹھا کر دوسری پلیٹ میں گنتی کے لۓ ڈالتی جاتی۔ ثمینہ یہ ساری کرواٸی دیکھ رہی تھی اور دل میں سوچتی رہی کہ یہ کیا قصہ ہے؟ لیکن کچھ نہ بولی کیونکہ وہ بے تکا بولنے والوں میں سے نہ تھی ۔تھوڑی دیر میں ناٸلہ قرآن لے آٸی ۔ثمینہ نے درس شروع کرنے سے پہلے خواتین کی طرف متوجہ ہو کر پوچھا آپ میں سے کوٸی سورہ المزمل کے معنی و مطلب جانتا ہے؟کوٸی سر ہلا نہ کوٸی ہاتھ اٹھا ۔ثمینہ نے ٹھنڈی سانس لی اور قرآن کریم کھول لیا ۔اور سورہ المزمل کا درس دیا۔جو کچھ کتاب اللہ نےسورہ المزمل میں کہا تھا اپنی تیاری اور صلاحیت کے مطابق بیان کر دیا۔ بہت سی خواتین کے لۓ آٹے کی بنی گولیوں پر سورہ المزمل پڑھنے والی واردات پرانی تھی اور اس بے چاری سورت کے مضامین اور انداز بیان نیا تھا۔ چنانچہ جب ثمینہ نے اپنے مختصر اور مدلل بیان کے بعد سوالات کی دعوت دی تو وہ جو” زمیں جنبد نہ جنبد گل محمد“ بنی بیٹھی تھیں ، یکے بعد دیگرے اپنے اپنے سوالات پوچھنے لگیں ۔

ثمینہ نےپوچھا ”آپ لوگ یہ کیا کر رہی تھیں؟ ہم 313 دفعہ سورہ المزمل ختم کر رہے تھے یہ تیرہ تیزی کا مہینہ ہے ناں۔۔۔۔۔۔ صفر کامہینہ جو مردوں پر بھاری ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ان میں سے ایک خاتون نے کہا۔ ”اورر یہ گولیاں کیسی ۔۔۔۔۔۔۔؟ثمینہ نے گولیوں کے بارے میں کچھ نہ سمجھتے ہوۓ کہا یہ گولیاں آٹے کی بنی ہوٸی ہیں ،جب ھم 313 سورہ المزمل پڑھ لیتے ہیں تو اتنی ہی تعداد میں یہ آٹے کی گولیاں سمندر میں بہا دیتے ہیں“ سمندر میں بہا دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ کیوں؟ثمینہ بولی۔ وہ اس لۓ کہ یہ گولیاں مچھلیاں کھا ٸیں اور ہمارے لۓ دعا کریں اور یہ بھاری مہینہ ہلکا ہو۔ یہ سن کر ثمینہ کا اپنا سر پیٹنے کو دل چاھا کہ ہماری قوم کس ڈگر پر چل رہی ہے ۔اتنا پڑھ لکھ کر ہم جاہل کےجاہل ہی ہیں اور یہ سوچتے ہوۓ اس نے کہا ” بہنو یہ صفر کا مہینہ جس کے لۓ کہا جا رہا ہے مردوں پر بھاری ہوتا ہے ،کمزور عقیدے کی ہمارے دین اسلام میں کوٸی گنجاٸش نہیں ہے ۔ہمارے ذہن میں صفر سے متعلق جو باتیں ہیں وہ غلط ہیں۔آپ تمام بہنیں انکو اپنے اپنے ذہنوں سے نکال دیں۔ آپ کو میری باتیں عجیب سی لگ رہی بوں گی کہ آ پ سب پختہ ذہن کی ہوچکی ہیں لیکن میرا بھی فرض ہے کہ آپ کو اس بارے میں صحیح رہنماٸی دوں تاکہ اللہ تعالی کے پاس جاٶں تو سرخرو ہو سکوں۔

تو میری پیاری بہنو !یہ مچھلیاں سبب نہیں ہیں ،اصل میں تو سبب ہمارے ہاتھ پیر ہیں، ان کو استعمال میں لاٸیں ،اپنے پنے مردوں کو ملازمت پر بھیجیں ، ان کو معاش کے لۓ جدوجہد کا کہیں ۔ اصل چیز تو کوشش اور اللہ تعالی بندوں کی کوشش کا پھل ضرور دیتا ہے اور یہی حقیقی بات ہے ۔آپ کی باتیں بالکل فرضی ہیں۔پورا قرآن اور حدیث پڑھ لیں یہ باتیں ہمیں کہیں نہیں ملتیں۔کیا خیال ہے آپ سب کا،میں ٹھیک کہ رہی ھوں ناں؟ تمام خواتین نے ثمینہ کی پر,زور تاٸید کی۔ اور پھر درس کے اختتام پر ناٸلہ نے ایک لمبا دسترخوان بچھایا جس میں انواع و اقسام کی ڈشیں دیکھ کر ثمینہ حیران رہ گٸی کہ یہ مہینہ مردوں پر بھاری ہے؟ اور یہ دیکھ کر اس کی آنکھیں پھٹی کی پھٹی رہ گٸیں۔۔

Add Comment

Click here to post a comment