Home » اے القدس! – انعم حسین
بلاگز

اے القدس! – انعم حسین

اے القدس! اے مسجد اقصی! آج کے چند الفاظ اور کچھ جذبے تمہارے نام! پچھلے سال جب تم پہ ظالموں نے ظلم کی انتہا کردی۔۔۔ ہم سے یہ سہا تو نہیں گیا لیکن اپنی بے بسی پہ بہت شرمندہ ہیں۔ آج پھر وہ غم و دکھ اور زخم تازہ ہوگئے۔۔۔ جب وہ وڈیوز سوشل میڈیا پر سامنے آئی تو آنکھوں سے وہ ظلم دیکھے نہیں گئے۔۔۔ مسجد القصی پر یہودیوں کا قبضہ ہمارے مسلمان بہن بھائیوں پر بے حد ظلم۔

وہ سب اپنے ایمان کی وجہ سے اتنی تکالیف اٹھا رہے تھے اللہ تعالی کے لیے گرفتار ہو رہے تھے۔۔۔ وہ اپنے لہو کی بازی دے رہے تھے۔۔ لیکن ان کے چہروں پر مسکراہٹ سجی تھی ان کی وہ مسکراہٹ دیکھ کہ ہمارا ایمان تازہ ہوگیا۔۔۔ انہیں اس بات کا دکھ نہیں بلکہ فخر تھا کہ وہ اپنے رب کی راہ میں شہید ہورہے ہیں۔۔۔ القصی کے لیے اپنی جان کی قربانیاں دے رہے ہیں۔۔۔ لیکن کچھ کے چہروں پر زخم اور ان کے اپنوں کو کھونے کا دکھ بھی افسردہ تھا۔۔۔ لیکن ہونٹوں پہ مسکراہٹ قائم تھی۔ ان کی مسکراہٹ اس بات کو واضح کر رہی تھی کہ۔۔ وہ یہودی اسرائیل سے نہیں ڈرتے۔۔۔ خود اپنا لہو دے سکتے ہیں لیکن القصی پر آنچ نہیں آنے دیں گے۔ بات اب یہ آتی ہے کہ۔۔ ہم کیا کر رہے ہیں؟ صرف وڈیوز اور تصاویر دیکھ کر اپنے دکھ کا اظہار کرتے ہیں؟ کیا ہمارا کوئی فرض نہیں ہمارا بھی تو کچھ فرض ہے نا۔۔ اگر ہم اور ہماری مسلم قوم نہ جاگی تو یاد رکھنا۔۔۔ ہمارا وقت بھی آئے گا۔۔۔ ہماری باری بھی آئے گی۔۔۔ پھر ہم بھی ایسے ہی چیخیں گے۔۔۔ ایسے ہی روئے گے۔۔۔۔۔۔ اپنی مدد کو پکاریں گے۔۔۔ ہمارا کیا حال ہوگا؟ ہم بھی تڑپے گے۔۔ تڑپ تڑپ کہ مر جائے گے۔۔۔ اور روز قیامت محشر کے میدان میں خدا کے حضور پیش ہوں گے تو کیا جواب دیں گے؟

ہمارے مسلمان بہن بھائی تڑپ رہے تھے لیکن ہم ان کی مدد کے لیے آگے نہیں بڑھے۔ پیارے اور معصوم بچے بھی خوبصورت سی پینٹنگز اور ڈرائنگز بنا کر القدس کے لیے اپنی محبت کا اظہار کر رہے ہیں۔ ان کے یہ جذبے اور ان کی محبت یہ ظاہر کرتی ہے کہ وہ القدس( القصی) سے محبت کرتے ہیں۔ اے میرے مسلمان بہن بھائیوں اپنا فرض بھول کر یہو نہ سوتے رہو۔۔۔ جاگو مسلمانوں جاگو۔۔۔۔ القدس تمہیں پکار رہا ہے۔۔۔۔۔ اپنا فرض ادا کرو۔۔۔ تاکہ کل کو القصی کے صحن میں کھڑے ہوکر فخر سے کہہ سکو کہ تم نے بھی اپنی محبت، اپنے جذبے اور اپنے کچھ خاص احساسات القدس کے نام کیے۔۔۔۔ اس وقت وہ لہو اور ہماری محبت اس بات کی گواہی دیں گے کہ ہم ان کے ساتھ کھڑے تھے۔

اے القدس! ہم تمہارے ساتھ کھڑے ہیں
اے القدس کے بہادروں! ہم تمہارے ساتھ کھڑے ہیں
اے مسجد القصی! ہمیں تم سے محبت ہے
ہاں! ہمیں تم سے محبت ہے۔۔۔۔۔۔!!

Add Comment

Click here to post a comment