اخندزادہ فیصل زمان صاحب کے معصوم بچے جو اس دنیا میں نہیں رھے۔ ثمینہ سعید




اخندزادہ فیصل زمان صاحب کے معصوم بچے جو اس دنیا میں نہیں رھے
۔ اللہ اس خاندان کو صبر جمیل دے ۔ یہ واقعہ جس میں مسافر بچے جو چھٹیاں گزارنے کراچی گئے اور وھیں اس ناگہانی کا شکار ھوئے ۔ اکثر بڑے شہروں میں باہر کھانے کا رواج ھے اور خاص طور پر بڑے شہروں کا کلچر بن چکا ھے اور آئے دن ھم میڈیا کے ذریعے یہ بھی جانتے اور دیکھتے ھیں کہ کس قدر ملاوٹ کھانے پینے کی اشیا میں کی جاتی ھے اور کچھ بھی خالص نہیں ملتا ہزاروں لوگ روزانہ ان بازاروں میں کھاتے ھیں ۔ مگر سوال یہ ھے کہ اس سارے معاملے میں زمہ دار کون ھے جو واقعہ کراچی میں ھوا اس خاندان کے ساتھ آپ سوچیے یہ کسی کے ساتھ بھی ھو سکتا ھے وقت کے حکمرانوں کی ذمہ داری ھے کہ وہ اشیائے خوردونوش پر چیک رکھیں
ملاوٹ کو روکے اور معیاری خوراک کی فراہمی کے لیے ھوٹل مالکان کو پابند کریں کہ کہیں کتوں اور مرے جانوروں کا گوشت کھلایا جاتا ھے کبھی گدھوں کے گوشت کی بازگشت سنائی دیتی ھے اور پھر زہریلا کھانا
اف یہ تصور ھی مشکل ھے کہ ایک ماں کی ساری اولاد اس کی آنکھوں کے تارے سارے اس کے سامنے لمحوں میں جدا ھو جائیں
اللہ اس ماں کو صبر دے اور ارباب اقتدار و اختیار کو توفیق دے کہ ان ظالموں کو کڑی سزا دیں اور ایسے تمام ھوٹل مالکان کے ھوٹل بند کیے جائیں جو حفظان صحت کے اصولوں کی پاسداری نہیں کرتے ۔ بہت ھی افسوس ناک اور غم ناک واقعہ ھے ۔ اللہ رحم فرما ۔اس خاندان کے لیے سب دعا ضرور کریں ۔ ننھی کلیاں اور پھول ۔ جن کے کھلنے کے دن تھے یوں مرجھا گئے

اپنا تبصرہ بھیجیں