الخدمت کی شہادت – عالیہ زاہد بھٹی




سوشل میڈیا،فیس بک یوزر،واٹس ایپ،یو ٹیوب،آن لائن لنکس……… کورونا کا رونا ان سب کے بیچ میں کچھ کہی ان کہی،کوئی سعی حاصل اور ناحاصل کی تگ و دو،
ہر ایک کی وال پر اس کی اپنی شہادت درج سنا تھا کہ دیواروں کے بھی کان ہوتے ہیں….. آج ہم اس دور میں ہیں کہ آج دیواروں کے صرف کان ہی نہیں،آنکھیں اور زبان بھی ہے . وہ زبان کہ جو جو چاہے تو سچ بولے ، اور نہ چاہے تو جھوٹ کو بھی ایک طرف رکھ دے مگر ان دیواروں کا معاملہ بڑا عجیب ہے صبح سے نہ جانے کتنی ہی دیواروں کو پڑھ اور دیکھ کر اپنا نوشتہ دیوار لکھنے کا دل چاہا . جن دیواروں کے مکین اپنی صورتوں سے پیار کرتے ہیں انہوں نے اپنی دیوار پر اپنی ہی تصویریں ٹانگ رکھی ہیں . بعض نے دنیا کو ہنسانے کا بیڑا اٹھایا ہے اور بعض نے رلانے کا …..بہت سے لوگ سچ اگل اگل کر شرافتوں کو نگل رہے ہیں اور بعض شرافتوں کو ثقافتوں کی کثافتوں میں لتھیڑ کر اصلاح کا بیڑا اٹھائے بیٹھے ہیں مگر مجھے سچی اور اچھی وال اور اس پر درج کہانی الخدمت کی بے لوث خدمت کی لگی .
الخدمت کے جوان بچے،بزرگ لاکھوں روپے کے راشن کی دشوار گزار علاقوں میں ترسیل کرنے کے بعد جب اپنے کھانے کا دسترخوان کھول کر روٹی پر پیاز رکھے کھاتے نظر آئے تو ان کے اس”شاہی”کھانے کو دیکھ کر دورخلافت راشدہ کا اک”شاہ”یاد آگیا کہ جو ناداروں کے لئے لنگرعام کا اہتمام کرکے خود کونے میں بیٹھا سوکھی روٹی پانی میں تر کرکے کھا رہا تھا. آج اسی کی یاد تازہ ہو گئی …… خدمت کے جذبے سے سرشار یہ الخدمت کے لوگ جانتے ہیں کہ کورونا کی یہ نادیدہ بلا ان کو بھی لگ سکتی ہے مگریہ لوگ احتیاط کو توکل کے کھونٹے سے باندھ کر گھروں سے نکلے ہوئے ہیں کہ ان پر”شہادت”کا بارِ گراں ہے ان کو پتہ ہے کہ شہادت ہے مطلوب ومقصود مومن…….. نہ مال غنیمت نہ کشور کشائی ، ان کو معلوم ہے کہ خدانخواستہ یہ احتیاط کے باوجود اللہ کے اذن سے اس وبا کے ہاتھوں جان کی بازی ہار بھی گئے تو یہ ان کی شہادت کی جیت ہوگی،جبکہ اگر ان کی امداد نہ ملنے پر کوئ وبا سے بچا ہوا بھوک سے مر گیا تو پکڑ ان کی ہوگی ؟ سوال یہ ہے کہ کیا ٹھنڈے پیٹوں اپنی اپنی سوشل میڈیا کی دیواروں پر اپنی تصویریں،کھانے،اور سرگرمیاں شئر کرتے ہوئےہمیں اپنی گواہی یاد نہیں آتی جو ہمارے ذمہ ہے؟
یاد ہے تو کب دیں گے آپ سب اپنی اپنی گواہی …… اگر دشوار گزار راستوں پر جاکر راشن تقسیم کرنا مشکل ہے تو گھر بیٹھے الخدمت کی خدمت میں حصہ ڈال کر اپنی دیواریں الخدمت کے ان رضاکاروں کی حوصلہ افزائی کے لیے تو مختص کر سکتے ہیں ناں؟

اپنا تبصرہ بھیجیں