احتیاطی تدابیر کے ساتھ عمرہ کیسے ادا ہوگا؟ تفصیل جانیے –




سعودی حکومت نے کورونا احتیاطی تدابیر کے ساتھ عمرہ ادائیگی کے لیے منصوبے کو حتمی شکل دے دی۔

آئندہ اتوار سے معتمرین کی آمد کا سلسلہ شروع ہو جائے گا اور پہلے مرحلے میں سعودی شہریوں اور بیرون ممالک مقیم سعودی باشندوں کو عمرہ ادا کرنے کی اجازت ہوگی۔

حکام نے عمرہ ادائیگی کے لیے 3 گھنٹے کا دورانیہ رکھا ہے جس میں گروہ کی شکل میں معتمرین کو حرم میں آنے کی اجازت ہوگی اور وہ عمرہ ادا کریں گے۔

اس سلسلے میں موبائل ایپلی کیشن بھی تیار کی گئی ہے جس کے ذریعے مختلف گروہوں میں معتمرین کو مقررہ اوقات میں ادائیگی عمرہ کے لیے بھیجا جائے گا۔

ابتدائی طور پر صرف سعودی شہریوں کو ہی سخت ایس او پیز اور احتیاطی تدابیر کے ساتھ عمرہ کرنے کی اجازت دی گئی ہے تاہم یکم نومبر سے دیگر ممالک کے افراد کو مرحلہ وار عمرہ کے لیے آنے کی اجازت ہوگی۔

پہلے گروہ کو خانہ کعبہ اور حجراسود کو چھونے کی اجازت نہیں ہوگی، انہیں خانہ کعبہ کے قریب نہیں آنے دیا جائے گا اور آب زم زم کی بوتلیں تحفے میں دی جائیں گی۔

وزارت حج و عمرہ نے دوسرا عمرہ کرنے والے خواہشمندوں سے کہا ہے کہ وہ پہلے عمرہ کرنے کے 14 روز بعد دوسرا عمرہ کرنے کے لیے ایپ کے ذریعے بکنگ کروا سکتے ہیں۔

وزارت کا کہنا ہے کہ اب تک 35 ہزار عمرہ کی درخواستیں موصول ہو چکی ہیں اور مرحلہ وار معتمرین کو وقفے وقفے سے عمرہ کرنے کی اجازت ہوگی۔

ایک دن میں 6 بار عمرہ ادا کیا جائے گا جس میں متعمرین گروہ کی شکل میں آئیں گے، شام کی نمازوں کے دوران عمرہ ادائیگی کی اجازت نہیں ہوگی اور سینیٹائزیشن کے بعد آدھے رات کو پھر سے گروہوں میں عمرہ ادا کیا جا سکے گا۔

حرم شریف امور کے نائب سربراہ احمد المنصوری کا کہنا ہے کہ عمرہ زائرین کو گروہوں میں تقسیم کیا جائےگا اور فی گروہ 1 ہزار افراد پر مشتمل ہوگا۔

معتمرین کو حرم شریف کے باہر سے تقسیم کر کے مختلف راستوں سے حرم مکی میں جانے دیا جائے گا اور ان کے ساتھ معاونت کار بھی ہوں گے جو پورٹوکولز پر عملدرآمد کروائیں گے۔

مطاف میں داخلے کے بعد طواف کا عمل شروع ہوگا، پہلی صف معذوروں، وہیل چیئرپر موجود افراد اور بڑھے لوگوں کے لیے مختص ہو گی۔ معتمرین کو حجر اسود کو بوسہ دینے کی اجازت نہیں ہوگی.

احتیاطی تدابیر کے ساتھ متعمرین کو سعی کے لیے لے جایا جائے گا اور یہ عمل مکمل ہونے پر براستہ مروہ اور ارقم سے باہر نکالا جائے گا۔

حرم مکی میں کھانے پینے کی اشیاء ساتھ لے جانے پر سختی سے ممنوع قرار دیا گیا، اعتکاف کی اجازت نہیں ہوگی۔

داخلی دروازے پر تھرمل اسکینر نصب کیے گئے ہیں اور دن میں ہر گروہ کے عمرہ ادائیگی سے قبل یا بعد میں حرم مکی کو سینیٹائز کیا جائے گا۔

بیت الخلا کو دن میں 6 بار صاف کیا جائے گا، قالین، وہیل چیئر اور لفٹوں کو بھی وقفے وقفے سے صاف اور سینیٹائز کیا جائے گا۔

Comments

اپنا تبصرہ بھیجیں