بھارتی پولیس کی دھمکیوں سے تنگ مسلمان خاندان نے خودکشی کرلی – Urdu News – Today News




حیدر آباد: بھارتی پولیس کے ہتک آمیز رویے کا شکار بننے والا خاندان خودکشی سے قبل اپنی وڈیو ریکارڈ کررہا ہے

حیدرآباد (انٹرنیشنل ڈیسک) بھارتی پولیس کی جانب سے ہتک آمیز سلوک اور تذلیل کے بعد مسلمان خاندان نے خودکشی کرلی۔ ذرائع ابلاغ کے مطابق واقعہ ریاست آندھرا پردیش کے ضلع کرنول میں پیش آیا۔ مقامی پولیس نے چوری کا جھوٹا الزام عائد عبدالسلام اور اس کے اہل خانہ کو مسلسل ہراساں کیا، جس پر تنگ انہوں نے ٹرین کے آگے کود کر جان دے دی۔ خودکشی سے قبل عبدالسلام نے خاندان کے ساتھ ایک وڈیو میں بتایا کہ ان پر چوری کا جھوٹا مقدمہ درج کیا گیا اور پولیس انہیں ذلیل کرکے دھمکیاں دے رہی ہے۔ وڈیو میں 42 سالہ عبدالسلام، اس کی 36 سالہ اسکول ٹیچراہلیہ، 14 سالہ بیٹی سلمیٰ اور 10 سالہ بیٹے داتا قلندر موجود تھے۔ وڈیو میں عبدالسلام کا کہنا تھا کہ ہم غریب و مجبور ہیں اور یہاں کوئی ہماری مدد کو تیار نہیں۔ خودکشی کا واقعہ ایک ہفتے قبل پیش آیا تھا، تاہم وڈیو سوشل میڈیا پر حال ہی میں وائرل ہوئی، جس پر پولیس انسپکٹر سوما شیکھر ریڈی اور ہیڈ کانسٹیبل گنگا دھر کو گرفتار کرلیا گیا۔ مقامی حکام نے گرفتار ملزمان پر خودکشی کے لیے مجبور کرنے، نقصان پہنچانے اور خطرناک ہتھیاروں کے زور پر دھمکانے کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کرلیا ہے۔ واقعے کے بعد تحقیقاتی کمیشن بھی تشکیل دے دیا گیا ہے، تاہم اب تک ہراساں کرنے والے نامزد اہل کاروں کو گرفتار نہیں کیا جاسکا۔ آندھرا پردیش میں مسلمانوں کے حقوق کے لیے سرگرم تنظیم کے صدر فاروق شبلی محمد کا کہنا تھا کہ عبدالسلام کا خاندان آندھرا پردیش میں ظلم و ستم کی بھینٹ چڑھنے والا پہلا کنبہ نہیں ہے۔ ریاست میں پولیس اور انتہاپسندوں کی جانب سے مسلمانوں پر حملوں اور ہراساں کرنے کے واقعات تواتر سے پیش آرہے ہیں، تاہم مودی سرکار نے اس موضوع پر بے حس رہنے کا تہیہ کرلیا ہے۔ دوسری جانب وسطی ریاست مدھیہ پردیش مزدور کو زندہ جلانے کے واقعے کی آڑ میں جماعتوں نے سیاست چمکانا شروع کردیا۔ وزیر اعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان نے مزدور کے اہل خانہ سے ملاقات کی اور امداد کی یقین دہانی کرائی، جس پر کانگریس نے انہیں تنقید کا نشانہ بنایا۔ کانگریس کے ترجمان نریندر سلوجا نے کہا کہ بی جے پی حکومت کے 15سالوں میں غریبوں، دلتوں، قبائلیوں پر ظلم و ستم کے واقعات میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔ انہیں قرض کے دلدل میں پھنسا کر ان کا استیصال کیا جاتا ہے، جس کی تازہ مثال حالیہ واقعہ ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں