اسرائیلی مظالم کاسب سے زیادہ نشانہ بننے والے شہرغزہ میں کورونا وائرس




غزہ: (6 اپریل 2020) غزہ وہ علاقہ ہے جہاں لاک ڈاؤن ایک عام بات ہے اب یہاں کورونا وائرس نے بھی رخ کرلیا ہے۔ غزہ کے شہری برسوں سے اسرائیلی مظالم کا شکار ہیں۔ اسرائیلی نے غزہ کی سرحدوں کو بند کر رکھا ہے اور غزہ میں خوراک کی سپلائی بھی کئی سالوں سے معطل ہے۔

غزہ کے شہری کورونا وائرس کے باعث اب گھروں میں رہنے پر مجبور ہیں جس کی وجہ سے ان کی مشکلات میں مزید اضافہ ہوگیا ہے۔ شہریوں کا کہنا ہے کہ وہ کورونا وائرس کہ وجہ سے شدید خوف و ہراس کا شکار ہیں کیونکہ اس سے نمٹنے کیلئے ہمارے پاس وسائل بھی نہیں ہیں۔ ہمیں صرف خدا ہی کا آسرا ہے۔ غزہ میں اب تک بیس افراد میں کورونا وائرس مثبت آیا ہے۔ شہر میں 20 لاکھ لوگ رہتے ہیں اور اس وبا سے نمٹنے کیلئے ان کے پاس وسائل کی شدید کمی ہے۔

شہر کے ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ غزہ میں صحت کی سہولیات نہایت خراب ہیں۔کئی برسوں سے اسرائیل کی جانب سے غزہ کی ناکہ بندی اور تنازعات نے غزہ کے شہریوں کو اسرائیل کے زیر عتاب رکھا ہے۔

غزہ میں اس وقت صرف 70 آئی سی یو ہیں۔ غزہ میں قائم اقوام متحدہ کے ایڈمنسٹریٹر نے بھی اپنا ادارہ بند کردیا ہے جس سے غزہ کی پٹی میں خوراک کا بحران پیدا ہونے کا خدشہ ہوگیا ہے جو شاید کورونا وائرس کی وبا سے بھی بڑھ کر ہو۔

اپنا تبصرہ بھیجیں