افغان حکومت نے100طالبان قیدی رہا کردیئے




کابل: (9 اپریل 2020) افغان حکومت نے بدھ کے روز سو طالبان قیدیوں کو رہا کر دیا۔ قیدیوں کی رہائی میں تاخیر کے باعث طالبان افغان حکومت سے مذاکرات ختم کردیئے تھے۔

افغان حکومت نے بدھ کے روز سو طالبان قیدیوں کو رہا کر دیا۔ منگل کے روز طالبان افغان حکومت سے قیدیوں کے تبادلے کے مذاکرات سے دستبردار ہو گئے تھے اور انہوں نے حکومت پر “وقت ضائع کرنے” کا الزام عائد کیا تھا۔ طالبان وفد گزشتہ تین روز سے کابل میں موجود تھا اور افغان حکومت اور طالبان کے درمیان قیدیوں کے تبادلے کے حوالے سے کئی ملاقاتیں ہوئی تھیں۔

ایک افغان عہدیدار نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر صحافیوں کو بتایا کہ بدھ کو افغان حکومت کی جانب سے رہائی یکطرفہ تھی اور اس کا مقصد خیر سگالی تھا۔

فروری میں افغان طالبان سے امریکی حکومت کے ہونے والے امن معاہدے پر دستخط کے بعد افغان حکومت امریکہ کے شدید دباؤ میں ہے کہ وہ طالبان کے ساتھ امن مذاکرات میں جلد از جلد پیشرفت کرے۔ افغان حکومت اور طالبان کے مابین مذاکرات میں پہلے ہی کئی ہفتوں کی تاخیر ہو چکی ہے۔ افغان حکومت اور طالبان کے درمیان مذاکرات کی ناکامی کا اثر امریکہ اور طالبان کے امن معاہدے پر بھی پڑنے کا امکانات ہیں۔ امریکا طالبان امن معاہدے کے مطابق طالبان سے براہ راست مذاکرات کیلئے افغان حکومت کو طالبان کے پانچ ہزار قیدی رہا کرنے تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں