بھارت میں اذان دینے پر موذن اور ان کے بیٹے پر تشدد، مسجد اور قران مجید کی بے حرمتی




گورکھپور: (28 اپریل 2020) بھارت میں مسلمانوں کو اب مذہبی فرائض ادا کرنا اور مشکل ہوگیا۔ گورکھپور کی مسجد میں اذان دینے پر ہندو انتہا پسند غنڈے مسجد میں گھس آئے قرآن شریف کی بے حرمتی کی گئی۔ موذن اور ان کے بیٹے کو مار مار کر لہولہان کردیا۔

اس سفاکیت سے بھرے واقعے کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئی ہے۔ جس میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ہندو انتہا دہشت گردوں نے مسجد کو بری طرح نقصان پہنچایا ہے۔ موذن کے بیٹے کے مطابق پچیس کے قریب غنڈے مسجد میں ظہر کی اذان کے وقت داخل ہوئے اور اذان دینے سے منع کیا۔ انہوں نے صرف اسی پر بس نہیں کیا بلکہ مسجد میں موجود دیگر افراد کو بھی ڈنڈوں اور لاٹھیوں سے بری طرح مارا پیٹا۔ مسجد میں رکھے قرآن مجید کے نسخوں کی بھی بے حرمتی کی گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں