امریکا میں مظاہرے، پولیس کوریج کے دوران صحافیوں پر چڑھ دوڑی




واشنگٹن: (04 جون 2020) امریکا میں سفید فام پولیس کے ہاتھوں سیاہ فام نوجوان کے قتل کیخلاف احتجاج کی کوریج کرنے والے صحافیوں پر بھی پولیس چڑھ دوڑی۔ صرف تین روز میں 150صحافی پولیس کی ربڑ کی گولیوں اور تشدد کا نشانے بنے۔ تمام مناظر کیمرے کی آنکھ میں محفوظ ہوگئے ہیں۔

امریکا بھر میں سیاہ فام شہری کے قتل کے خلاف شہر شہر مظاہرے ہنگاموں میں تبدیل ہوچکے ہیں۔ مظاہرین کی آواز دبانے کیلئے امریکی انتظامیہ اوچھے ہتکھنڈوں پر اتری ہوئی ہے۔ صحافیوں کو جلاؤ گھیراؤ، توڑ پھوڑ اور پولیس کی مظاہرین پر تشدد کی کوریج سے روکا جانے لگا۔

وائٹ ہاوس پربھی مظاہروں کی براہ راست نشریات کے دوران پولیس نے صحافیوں پرطاقت کابے دریغ استعمال کرکے ان کو ربڑ کی گولیاں سے شدید زخمی کیا۔ مرچوں کے گولے پھینکے گئے،کیمرے توڑنے کی کوشش کی گئی، براہ راست نشریات کے دوران ہتھکڑیاں لگائی گئیں۔

ایک صحافی کی آنکھ پر ربڑ کی گولی مار کر اس کی ایک آنکھ ہمیشہ کیلئے ضائع کردی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں