ٹرمپ کا مشتعل مظاہرین سے نمٹنے کے لئے تعینات فوج واپس بلانے کا اعلان




واشنگٹن:(05 جون 2020)امریکی صدر ٹرمپ نے سیاہ فام کے قتل پر مشتعل مظاہرین سے نمٹنے کے لئے تعینات فوج واپس بلانے کا اعلان کیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق امریکی جرنیلوں نے صدر ٹرمپ کے کہنے پر فوج کو مظاہرین کے خلاف استعمال کرنے سے انکارکیا جس پر صدر ٹرمپ اپنے موقف سے پسپا ہونے پر مجبور ہوگئے اور انہوں نے واشنگٹن کے باہر تعینات فوجی واپس شمالی کیرولائنا بھیج دئیے ہیں۔

بےگناہ جارج فلائیڈ کی موت کیخلاف مظاہرہ کرنیوالوں کو کچلنے کے لیے 200 فوجیوں کو واشنگٹن طلب کیا گیا تھا تاہم سڑکوں پر تعیناتی سے پہلے ہی صدر ٹرمپ کیخلاف محاذ کھڑا ہوگیا۔

فوج کے سابق فوراسٹار جنرل جان ایلن اور سابق وزیردفاع جنرل ریٹائرڈ جیمز میٹس نے بھی صدر ٹرمپ کی جانب سے فوج طلب کرنے پرکھلی تنقید کی تھی۔

اس کے علاوہ میناپولس میں جارج فلائیڈ کی آخری رسومات کی ادائیگی کردی گئیں، اس موقع پر ڈیموکریٹک اراکین نے گھٹنے ٹیک کر جارج کو خراج عقیدت پیش کیا۔

دوسری جانب امریکا کے شہر منیا پولیس میں سیاہ فام جارج فلائیڈ کے قتل میں ملوث تینوں پولیس اہلکار ملزموں کو ضمانت پر رہا کردیا گیا، جج نے تینوں اہلکاروں کی ساڑھے سات لاکھ ڈالر فی کس کی ضمانت منظور کی۔

واضح رہے کہ تینوں پولیس اہلکاروں پر گزشتہ روز مقدمات درج کیے گئے تھے۔ گردن پر گھٹنا رکھنے والے سفید فام پولیس اہلکار کے خلاف مقدمے میں مزید سنگین نوعیت کے الزامات کی دفعات شامل کی گئیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں