یہ سروں کی گواہیاں – بنت شیروانی




آج جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے محبت کرنے والیاں سڑکوں پر نکلیں تو بہت اچھی لگیں. ہاتھوں میں انھوں نے پوسٹرز اٹھاۓ ہوۓ تھے جس میں محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر جان بھی قربان ہے درج تھا۔ نہ جانے کیوں یہ خواتین بہت پیاری لگیں۔ ان سے محبت محسوس ہوئی۔

غور کرنے پر لگا کہ یہ ہمارے نبی کی ناموس کی خاطر نکلی ہیں اسی لۓ ان سے محبت محسوس ہورہی ہے۔ یہ اپنی اپنی لگ رہی ہیں کہ ہاں میں بھی اسی نبی کی امت میں سے ہوں۔ مجھے بھی نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے محبت ہے۔ اسی لۓ یہ مجھے پیاری ہیں۔ان خواتین میں وہ نوجوان خواتین بھی تھیں جن کے اپنے گھروں کی بہت سی ذمہ داریاں تھیں لیکن یہ اپنے گھروں سے نکلیں ۔ان میں بوڑھی خواتین بھی تھیں جو بہ مشکل چل پاتی ہیں لیکن وہ بھی نظر آرہی تھیں۔اور وہ لڑکیاں جن کی پڑھائی بہت زیادہ مشکل ہے لیکن وہ بھی اپنا قیمتی وقت نکال کر سڑکوں پر موجود تھیں۔اور چھوٹے بچے والیوں نے بھی یہ عذر پیش نہ کیا تھا کہ ہمارے بچے چھوٹے ہیں۔

تو اے میری تمام بہنوں، ماؤں اور بیٹیوں آج تم نے سڑکوں پر نبی کی ناموس کی خاطر نکل کر اپنی نبی سے محبت کی گواہی لکھوا دی ہے۔یقینا” رب تمھیں اس کا اجر دے گا اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شفاعت نصیب کرے گا کہ ہاں تم لوگ بہت پیاری ہو اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر ہماری جانیں ،ہمارے ماں باپ بھی قربان ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں