Home » رمضان میں یہ چار وظائف ہر گِز مت چھوڑنا
اسلامیات

رمضان میں یہ چار وظائف ہر گِز مت چھوڑنا

رمضان کا خاص خیال رکھو کیونکہ یہ اللہ تعالیٰ کا مہینہ ہے جو بڑی برکت والا اور بلند شان والا ہے ۔ اس نے تمہارے لئے گیارہ ماہ چھوڑ دیئے ہیں جن میں تم کھاتے ہو اور پیتے ہو اور ہر قسم کی لذات حاصل کرتے ہو مگر اس نے اپنے لئے ایک مہینہ کو خاص کرلیا ہے ۔ مجمع الزوائد رمضان المبارک کو سَیِّدُ الشُّہُور یعنی تمام مہینوں کا سردار بھی کہا گیا ہے ۔ یہ مہینہ بے شمار برکات کا مہینہ ہے ۔

چودہ سو برس سےلاکھوں کروڑوں صلحاء و ابرار ان برکات کا مشاہدہ کرتے آئے ہیں اور آج بھی ان برکات سے بہرہ اندوز ہونے والے بزرگ بکثرت موجود ہیں۔ ان ایام میں مخلص روزہ داروں کو خاص روحانی کیف سے نواز ا جاتا ہے، ان کی دعائیں سنی جاتی ہیں۔ ان پر انوار کے دروازے کھلتے ہیں۔ انہیں معارف سے بہرہ ور کیا جاتا ہے ۔ وہ کشف ، رویا او ر الہام کی نعمت سے سرفراز ہوتے ہیں اور سب سے بڑھ کر یہ کہ انہیں خد ا کی رضا نصیب ہوتی ہے ۔ تو اس پر اللہ کی بے پایاں رحمتوں کا نزول ہوتا ہے۔ماہ رمضان میں جو لوگ اذکار و تسبیحات کرتے ہیں ،وہ اس ماہ کے دوران یہ چار وظائف بھی کرسکتے ہیں ۔یہ انتہائی مختصر اور جامع وظائف ہیں جو انسان کو رزق و صحت کی بحالی ،دعا کی قبولیت اور گناہوں سے بچانے میں مدد فراہم کرتے ہیں ۔ روزی میں وسعت کے لئے ۔ نماز فجر کے بعد اول آخر درود ابراہیمی 21 مرتبہ ، اور ذیل کے وظیفہ کو 1100 بار پڑھیں ۔ یَا بَاسِطُ یَا مُنْعِمُ گناہوں سے چھٹکارہ پانے کے لئے ۔ نماز اشراق کے بعد اوّل و آخر درود ابراہیمی 7 مرتبہ اور اس وظیفے کو 313 مرتبہ پڑھیں ۔

یَا آخِرُیَا ھَادِیُ دعا کی قبولیت کے لئے ۔ نماز فجر کے بعد اول و آخر درود ابراہیمی 3 مرتبہ اور اس وظیفے کو 41 مرتبہ پڑھیں ۔ یَاسَمِیْعُ یَامُجِیْبُ خیر و برکت کے لئے ۔ نماز چاشت کے بعد اول و آخر درود ابراہیمی 7مرتبہ اور اس وظیفے کو 101مرتبہ پڑھیں ۔ یَا مُعْطِیُ یَاشَکُوْرُ حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: اے انسان! جب تک تو مجھ سے دعا کرتا اور اُمید رکھتا رہے گا، میں تیرے گناہ بخشتا رہوں گا چاہے تجھ میں کتنے ہی گناہ ہوں مجھے کوئی پرواہ نہیں۔ اے انسان! اگر تیرے گناہ آسمان تک پہنچ جائیں پھر تو بخشش مانگے تو میں بخش دوں گا مجھے کوئی پرواہ نہیں۔ اے انسان! اگر تو زمین بھر گناہ بھی لے کر میرے پاس آئے لیکن تو نے شرک نہ کیا ہو تو میں تجھے اس کے برابر بخشش عطا کروں گا۔حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: اگر مسلمان کو معلوم ہوتا کہ اللہ تعالیٰ کے پاس کس قدر سزا ہے تو کوئی بھی اُس کی جنت کی اُمید نہ رکھتا۔ اگر کافر کو معلوم ہوتا کہ اللہ تعالیٰ کے پاس کس قدر رحمت ہے تو کوئی (کافر) بھی اُس کی جنت سے نا اُمید نہ ہوتا۔اللہ ہم سب کا حامی وناصر ہو۔آمین