Home » یا رزاقُ یا رحمٰن یا رحیم یا سلامُ کا وظیفہ
اسلامیات

یا رزاقُ یا رحمٰن یا رحیم یا سلامُ کا وظیفہ

اللہ تعالیٰ کی جلالت و عظمت اس کی ناراضگی سے انسان ڈرتا رہے اور اللہ کا خوف دل میں پیدا کرنے کے لیے اس کی قدرت کا خیال دل میں جمایا جا ئے اسی کے ساتھ انجامِ بد کو سوچا جا ئے نافرمانوں کے لیے جن عذاب وں کی وعید آئی ہے ان کا تصور کیا جا ئے۔

 اہلِ اللہ کے دل میں کس قدر خوفِ خدا تھا اس کا اندازہ اس سے لگا یا جا سکتا ہے کہ شیخ سعدی ؒ نے لکھا ہے کہ ایک سال حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی ؒ حج کے لیے گئے تو لوگوں نے دیکھا کہ حرمِ کعبہ میں کنکریوں پر پیشانی رکھ کر دعا میں کہہ رہے تھے۔ اے اللہ مجھے بخش دے اور اگر میں س ز ا کا مستحق ہوں تو ق ی ا م ت میں مجھے اندھا اُٹھا نا تا کہ نیکوں کے رو بر و شرمسار نہ ہو نا پڑے جب اتنے بڑے ولی اللہ سے اتنا ڈرتے تھے تو ہمیں کتنا ڈرنا چاہیے جب کہ ارشادِ ربانی بھی ہے جس کا مفہوم ہے اللہ تعالیٰ زیادہ مستحق ہے کہ تم اس سے ڈرو اور جو اللہ تعالیٰ سے ڈرتے ہیں ان کے متعلق قرآنِ پاک میں فر ما یا جس کا مفہوم ہے یعنی جو شخص دنیا میں اپنے رب کے سامنے کھڑا ہونے سے حقیقی معنوں میں ڈرا ہو گا اور حرام چیز سے رکا ہو گا تو جنت اس کا اصلی ٹھکانہ ہو گا اور گناہ سے وہی بچے گا جس کے دل میں اللہ تعالیٰ کا خوف ہو گا ۔

اب جس میں جتنا زیادہ اللہ تعالیٰ کا خوف ہو گا وہ اتنا ہی زیادہ گناہ سے بچے گا  یہ تسبیح رات کو پڑھ کر سونا ہے آپ کے گھر میں جو مشکلات ہیں اللہ انکو دور فرمائے گا ۔ بالخصوص جو لوگ قرض میں مبتلا ہیں غربت کا شکار ہیں  یہ عمل ان کے لیے بہت خاص ہے یا رزاقُ یا رحمٰنُ یا رحیمُ یا سلامُ  اسی کی نیت کر کے پڑھیں۔

Add Comment

Click here to post a comment