قتل چھپتے تھے کبھي سنگ کي ديوار کے بيچ




قتل چھپتے تھے کبھي سنگ کي ديوار کے بيچ

اب تو کھلنے لگے مقتل بھرے بازار کے بيچ

اپني پوشاک کے چھن جانے پہ افسوس نہ کر

سر سلامت نہيں رہتے يہاں دستار کے بيچ

سرخياں امن کي تلقين ميں مصروف رہيں

حرف بارود اگلتے رہے اخبار کے بيچ

کاش اس خواب کي تعبير کي مہلت نہ ملے

شعلے اگتے نظر آۓ مجھے گلزار کے بيچ

ڈھلتے سورج کي تمازت نے بکھر کر ديکھا

سر کشيدہ مرا سايا صف اشجا ر کے بيچ

رزق، ملبوس ، مکان، سانس، مرض، قرض، دوا

منقسم ہو گيا انساں انہي افکار کے بيچ

ديکھے جاتے نہ تھے آنسو مرے جس سے محسن

آج ہنستے ہوۓ ديکھا اسے اغيار کے بيچ

                                                     محسن نقوی

قتل چھپتے تھے کبھي سنگ کي ديوار کے بيچ” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں