Home » عورت ہوں عزت ہوں – صفیہ نازانصاری
اسلامیات

عورت ہوں عزت ہوں – صفیہ نازانصاری

عورت کو دین اسلام نے جو مقام دیا وہ کسی اور نے نہیں .نبیؐ نے فرمایا اللہ تعالیٰ سے ڈرو عورت کے معاملے میں…….
ارشادِ نبویؐ ہے :عورت اپنے شوہر کے گھر اور اسکے بچوں کی نگران بنائی گئی ہے قیامت والے دن اس سے باز پرس کی جائے گی(صحیح بخاری)

مغرب کے کھوکھلے نعروں کی جگہ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں نہیں یہ صرف عورتوں کے حقوق پر حملے ہےMy Uterus My Choice میری بچہ دانی میرا انتخاب؟؟؟میراجسم میری مرضی یہ صرف لڑکیاں تفریحی حقوق حاصل کرنا چاہتی ہیں . یورپ نے جو کچھ عورتوں کو دیا وہ در حقیقت عورت کو نہیں مردانگی کو درحقیقت اس مرد مونث یا زن مزکر کیلئے جو جسمانی حیثیت سے تو عورت ہے مگر دماغی اور ذہنی مرد ہو اور تمدن اور معاشرت میں مرد ہی کے سے کام کرے . مغرب میں عورت مرد کا لباس پہن کرفخر کرتی ہیں جبکہ مرد عورت کا لباس پہنا پسند نہیں کرتا . گھر کی ملکہ شوہر کی بیوی بچوں کی ماں اور اصلی حقیقی عورت کو کوئی عزت نہیں آج بھی انکی نگاہ میں ذلیل ہے جیسے دور جاہلیت میں تھی . ظاہر ہےکہ یہ انوثت زنانگی کو عزت نہیں جوبلیت مردانگی کی عزت ہے . پھر احساس پستی کی ذہنی الجھن inferiority complex کا کھلا ثبوت ہے.

” دین اسلام میں اللہ نے جوعزت عورت کو دی اس سے بڑی دلیل اور کیا ہوسکتی ہے . پیارے نبیؐ کو دنیا میں بھیجنا عورت کو ہی ماں بناکر اور پوری نسل کو پروان چڑھایا . ہم مائیں ہم بہنیں ہم بیٹیاں ہم سے ہی سارا جہاں آباد ہم سے ہی قوموں کی عزت…..