اک شخص سارے شہر کو ویران کر گیا – ناعمہ قاضی




کچھ دنوں سے بزرگ علماء کا پے در پہ اس جہاں فانی سے رخصت ہوجا نا……. بہت تکلیف دہ ۔ اللہ تعالیٰ سے مسلسل دعا مانگنا کہ جو رہ گئے ہیں انکی حفاظت کرنا اور صحت والی زندگی عطاء کرنا …… مرشد صاحبِ علیل تھے دعا کی یا اللہ انکی حفاظت فرمانا ۔ خبر ملی سید منور حسن دار فانی سے کوچ کر گئے دل ہو ہلا دینے والی خبر تھی .
وہ جس کام کی تیاری میں لگے ہوے ہوے تو وہ اس ملاقات کیلے جارہے ہیں۔۔۔ پر یا اللہ میں نے تو کہا تھا آپ حفاظت فرمانا پر یہ کیا ؟؟؟؟؟ خیال آیا اللہ تو ستر ماؤں سے زیادہ پیار کرنے والے ہیں ایسی حفاظت کی جو ہم سب نہیں کر سکتے تھے ۔ آیت مبارکہ زہن میں آگئی۔۔
اے نفس مطمئنہ لوٹ اپنے رب کی طرف اس حال میں کہ تو اپنے نیک انجام سے خوش اور اپنے رب کے نزدیک پسندیدہ ہے ۔۔شامل ہوجا میرے نیک بندوں میں اور داخل ہوجا میری جنت میں ……. سورہ الفجر
ایسی حفاظت گاہ لیکر گئے جہاں آرام ہی آرام ہوگا ۔۔۔ جہاں ابو الاعلیٰ مودودی صاحب۔نعمت اللہ خان صاحب۔ قاضی حسین احمد صاحب باہیں واہ کیے مسکراتے چہروں کے ساتھ انکے استقبال کیلے کھڑے ہونگے ۔۔۔۔ فرشتہ انکی تیاریوں میں مصروف ہونگے نفس مطمئنہ آرہی ہے حوریں منتظر ہونگی منور آرہا ہے وہ منور جس کا اندر اور باہر ایک وہ صبح منور شام منور وہ نڈر اور حق بات کہنے والا منور ۔۔۔۔ مرحبا مرحبا کی صدائیں ہونگی ۔۔۔۔آہ!!!!!!! وہ منظر جنت کا کیسا حسین منظر ہوگا ۔ دل نے گواہی دی اللہ نے بہترین حفاظت فرمائی۔۔۔
1944سے شروع ہونے والا سفر 2020 پر اختتام ہوا …….. اللہ پاک سید صاحب کے درجات بلند فرمائیں اور انکے اگلے تمام مراحل آسان فرمائیں آمین ۔۔۔
بچھڑا کچھ اس آدا سے کہ رت ہی بدل گئی۔۔۔
اک شخص سارے شہر کو ویران کر گیا۔۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں