پر عزم لوگوں کا دین – زبیر منصوری




سوچتا تھا! اصحاب کہف اپنے زمانے کے دیندار لوگ ! انہیں بھلا وہ غار کیسے ملا ہو گا دور کہیں ویرانے میں؟
یہ تو اللہ اللہ کرنے والے سیدھے سادے سنجیدہ باشرع مسلمان…… ان کا کیا لینا دینا جنگلوں ویرانوں سے؟ بھلا ہو شیخ نعمان کا ……. انہوں نے امریکی نوجوانو ں سے ایک درس میں کہا کہ یہ نوجوان جنہیں ان کے رب نے کہا کہ “ہم نے “انہیں پیار سے تھپک کے سلایا تھا یہ دراصل زندہ دل انرجیٹک اور خوش مزاج سے لوگ تھے……. ان میں زندگی تھی توانائی تھی حوصلہ تھا مہم جوئی تھی اور نوجوانی کے وہ سارے جذبے تھے جو اہل ایمان کو زندہ دل بناتے ہیں اور ایسے ہی کسی کتیبے میں کسی کیمپ فائر میں کسی جنگل اور پہاڑوں کی مہم جوئی میں انہوں نے وہ غار بھی دیکھا ہو گا اور پھر جب اس مصیبت کے مرحلہ پر انہیں پناہ گاہ کی ضرورت پیش آئی تو انہیں وہی غار یاد آگیا اور وہ پناہ گاہ بنا۔۔!
ہے نا مزے کی بات! اسلام خوش مزاج خوش گوار بہادر حوصلہ مند پرجوش پر عزم لوگوں کا دین ہے……. مردہ دل، نک چڑے، زاہد خشک ، روکھے پھیکے، کونوں کھدروں میں پڑے ،اداس، ہر وقت لئے دئیے رہنے والے چونکہ چنانچہ ، اگرچہ مگرچہ ،یہ غلط وہ غلط ایسا ہونا چاہئیے تھا ویسا ہونا چاہئیے تھا۔۔۔اس مزاج کے لوگ جو اسے دین کا تقاضا بھی سمجھتے ہوں مناسب سمجھیں تو اپنے روئیے پر نظر ثانی کریں !

اپنا تبصرہ بھیجیں