پھولوں کی خوشبو محسوس کیجیے ۔ شہزاد مرزا




سانحہ اے پی ایس بہت سنگین اور روح چیر دینے والا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بالکل اسی طرح باجوڑ میں بچوں کے مدرسہ پر ڈرون حملہ اور پشاور میں بچوں کے مدرسہ میں حالیہ بم دھماکہ بھی اتنے ہی سنگین ، دل ہلا دینے والے اور کربناک ہیں ۔

دکھ ہوتا ہے جب عصری اسکول کی بات ہو تو ہمارے سماج کا نظریہ الگ ہوتا ہے اور مسجد مدرسے کی بات ہو تو معاشرے کا نظریہ اور ہمدردی کی نوعیت ہی بدل جاتی ہے ۔ تینوں جگہ معصوم بچے تھے ، نوخیز کلیاں تھیں ، زخم لگنے پر سبھی کو ایک جیسا درد ہوا ہو گا ، ان بچوں کے والدین نے بھی بہت مشقت اور تکلیف سے پیدا کر کے انہیں پالا تھا ۔ معصوم لاشے کہیں کے بھی ہوں اعصاب پر بہت بھاری محسوس ہوتے ہیں، خدارا ان میں فرق مت کرو۔ صرف عوام ہی نہیں حکومت اور سکیورٹی اداروں کو بھی سب کو ایک ہی عینک سے دیکھنا ہو گا ۔

مدرسے کے معصوموں کے خون آلود چہرے ایک بار دیکھو خدا کی قسم کسی بھی لحاظ سے اے پی ایس کے معصوموں سے کم نہیں لگیں گے، مسلے ہوئے پھولوں کی ایک جیسی خوشبو محسوس ہو گی۔اس لئے مدارس کے بچوں کے قاتلوں کی گرفتاری پر بھی ایمرجنسی لگنی چاہئے، ترانے اور پروگرامات ہونے چاہیں اور انہیں قومی سطح پر ہیرو تسلیم کرنا چاہئے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں