Home » نسل نو کی فکر کریں! – کرن وسیم
پاکستان

نسل نو کی فکر کریں! – کرن وسیم

آج کل حقیقتاً ایسا لگنے لگا ہے کہ پوری دنیا میں صرف پاکستانی مائیں ہی اپنے بچوں کی بہتر تربیت اور اخلاق کے لیئے پریشان رہتی ہیں ۔ حالانکہ ایسا ممکن نہیں ہے کہ باقی دنیا میں عورتوں کیلئے بچوں کی تربیت کوئی اہمیت نہ رکھتی ہوگی۔ ہر عورت کیلئے اسکے بچے ترجیحات میں صف اول کی حیثیت رکھتے ہیں ۔

بچے کو دنیا میں لانے کی تکلیف دہ مشقت کے فوراََ بعد ہی اپنی ساری تکالیف بھلا کر اسکی نشوونما اور ضروریات کے لیے کھڑی ہوجانے والی یہ مخلوق اپنے بچے کو ہر پہلو سے ایک مکمل اور متوازن شخصیت میں ڈھالنا چاہتی ہے ۔ لیکن پاکستان کی ماں مسلسل پریشان ہورہی ہے حکومت کے تباہ کن اقدامات اور اسکے نتیجے میں پیدا ہونیوالے ماحول اور معاشرے کی تبدیلیوں سے ۔۔۔ نااہلی اور کم ظرفی کا مشاہدہ کیا جائے تو نئ نسل کے حوالے سے ایسے ایسے اقدامات اٹھائے جارہے ہیں جنکے دور رس اثرات سامنے آئیں گے تو نوجوان طبقہ تباہیوں کے دھانے پر کھڑا ہوا ہوگا ۔ مہنگائی اور گرتی معیشت نے جسطرح بنیادی ضروریات پوری کرنا اجیرن کیا ہے ۔ وہیں گمراہ کن پالیسیز کی وجہ سے ذہنی انتشار بڑھتا جارہا ۔ کوئی وجہ نہیں سمجھ آرہی میوزک اور فلم انڈسٹری کو سبسڈائزڈ کرنے اور ٹیکس سے مبرا کرنے کی، جبکہ تعلیم ، صحت اور توانائی کے شعبے انتہائ گراوٹ کا شکار ہیں اور عام آدمی کی پہنچ سے دور ہیں ۔

بنیادی ضروریات کی عدم فراہمی اور ٹیکسز کی بھرمار کے باوجود یہ فیصلے ادھڑے زخموں پر نمک چھڑکنے کی مثال ہیں ۔ جس ملک کی پینسٹھ فیصد آبادی کو پینے کا صاف پانی میسر نہ ہو وہاں میوزک انسٹرکٹرز اور فلم میکرز کی حشر سامانیاں کون سی آسانیاں پیدا کریں گی ۔ یہ عقل والوں کیلئے تو حیران کن ہے مگر صاحبان اقتدار کی عقول ابھی اس ارتقاء تک نہیں پہنچی ۔ بیرونی آقاؤں کے دماغ سے سوچنے والے اپنے سر درد کے علاج کیلئے بھی دیار غیر سدھار جاتے ہیں ۔ بلکتی ، سسکتی عوام کے ٹیکسز سے اپنی عیاشیوں کو جاری رکھنے کے بعد شاید ذہن سوچنے سمجھنے کی صلاحیت کھو دیتے ہیں ۔ اپنے پالتو جانوروں کو اے سی کی ٹھنڈک میں سلانے والے ایک عام پاکستانی کی لوڈ شیڈنگ میں گزری راتوں اور نامکمل نیند ، تھکن سے چور دل و دماغ سے خون کا آخری قطرہ بھی نچوڑ لینا اپنا حق سمجھتے ہیں ۔ پاکستان کی ماں اسوقت اذیت ناک اندیشوں کی زد میں ہے ۔ یہ الجھے ذہنوں کی خواتین اپنی نسلوں کو ممتا کی نرم مسکراہٹ اور گرم جوشی دینے سے قاصر ہورہی ہیں ۔ انکے چہروں پر حالات کی تنگی اور مستقبل کے واہموں نے دائمی پریشانی کی زردیاں پھیر دی ہیں۔

ایک پریشان حال ، منتشر ذہن نسل تیار کرنے میں اہم کردار ہمارے نااہل ، کرپٹ ، سنگدل حکمران ادا کررہے ہیں ۔ غور کریں تو یہ ایک عالمی لطیفہ ہے کہ تعلیم ، صحت و صفائی ، بجلی و توانائی ، صاف پانی اور سستی خوردنی اشیاء سے قطعی محروم قوم ۔ حکومتی سبسڈی کی مستحق اور ٹیکسز سے آزاد فلم انڈسٹری کی مالک ہے ۔ میڈیا اینٹرٹینمنٹ اور میوزک سے لطف اندوز ہوتے ہوئے بھوکی مرےگی ۔ اس بات کیلئے حکومت پاکستان کو شاباشی تو بنتی ہے ۔  عوام الناس ساری کشتیوں پر سوار ہوکر دیکھ چکے ہیں ، حالات بد سے بدتر کی طرف گامزن ہوتے چلے جارہے ہیں ۔ پاکستان کی سرزمین مخلص اور اہل افراد سے خالی تو نہیں ہے لیکن افسوس پاکستانیوں کو اب تک کھرے ، کھوٹے کی پہچان نہ ہوسکی ۔یہ وقت آنکھوں سے پٹیاں کھولنے کا مطالبہ کررہا ہے ۔

اپنے بچوں کا مستقبل اور ملک و ملت کی باگ ڈور صالح ہاتھوں میں تھمانا ہمارے اختیار میں ہے ۔ جنکے دلوں میں ایمان اور خوف خدا موجود ہوگا وہ ہماری نسلوں کی فکر بھی اپنے بچوں کی طرح ہی کریں گے ۔ ہر مسئلے کے دیرینہ حل کی طرف قدم بڑھائیے ۔ صالح اور ایماندار قیادت کی ہمیں اشد ضرورت ہے ۔ یہ ایک پریشان ماں کی درخواست ہے ۔ 

درد میں سانجھی ساتھ نہیں

درد میں سانجھی ساتھ نہیں آنکھوں میں ویرانی تھی دل بھی میرا شانت نہیں اجلے دن میں نا کھیلی تھی گھور اندھیری رات میں بھی حصہ میں جس کے آتی تھی وہ شاہ میں گدا کہلاتی تھی آنسو پی کے جیتی تھی ذلت کا نشانہ بنتی تھی یا خاک میں زندہ رلتی تھی ہرس و ہوس کا سمبل تھی یا اینٹوں میں چن دی جاتی تھی چند ٹکوں میں بکتی تھی آہ میری بے مایہ تھی سوکھے لبوں پہ مچلتی تھی

威而鋼

以前服用威而鋼,但有效時間僅僅只有4小時,對於在常年在高原的我來說,時間有點太短,所以會考慮犀利士。

  • 犀利士(Cialis),學名他達拉非

犀利士購買

與其他五花八門的壯陽技巧相比,犀利士能在40分鐘內解決性功能勃起障礙問題,並藥效持續36小時。這效果只有犀利士能做到,因為醫療級手術複雜,不可逆,存在安全隱患;植入假體和壓力泵等,使用不便,且有病變的可能。