What’s the new WhatsApp policy?







واٹس ایپ کی نئی پالیسی کیا ہے اور صارفین کو پرائیویسی سے متعلق کیا خطرات لاحق ہوسکتے ہیں؟

واٹس ایپ کی نئی پالیسی کے مطابق لوگوٕں کے موبائل نمبر، تصاویر، اسٹیٹس، فون ماڈل  آپریٹنگ سسٹم کے ساتھ ساتھ صارفین کا ڈیٹا فیس بک سمیت دیگر پارٹیوں سے شیئرہوگا.

نئی پالیسی کے تحت صارفین کی مالی ٹرانزیکشنر کا ڈیٹا، لوکیشن اور ڈیوائس کی انفارمیشن بھی تھرڈپارٹی کومیسرہوگی.

واٹس ایپ نئی پالیسی کے تحت صارفین کا ڈیٹا نہ صرف استعمال کرے گا بلکہ واٹس ایپ سے منسلک ٹھرڈ پارٹی اور فیس بک کے ساتھ بھی شیئر کرے گا.

واٹس ایپ کی جانب سے نئی پالیسی میں بتایا گیا ہے کہ کاروباری ادارے کیسے فیس بک کی سروسز کو استعمال کرکے واٹس ایپ چیٹس کو اسٹور اور مینج کرسکتے ہیں اور صارفین کا ڈیٹا اسٹور کرنےکے لیے فیس بک کا عالمی انفراسٹرکچر استعمال کیا جارہا ہے.

واٹس ایپ نے نئی پالیسی سے متعلق صارفین کو نوٹیفیکیشنز بھی بھیج دیے ہیں جس میں پالیسی کو قبول کرنے کے لیے 8 فروری تک کا وقت دیا گیا ہے بصورت دیگر صارف واٹس ایپ اکائونٹ تک رسائی کھوبیٹھے گا.

دوسری جانب صارفین کی جانب سے واٹس ایپ کی نئی پرائیوسی پالیسی میں تبدیلی پر خدشات کا اظہار کیا جارہا ہے اور واٹس ایپ کے علاوہ دیگر کالنگ اور میسجنگ سروسز کو ڈائون لوڈ کرنے میں اضافہ دیکھا گیا ہے.





اپنا تبصرہ بھیجیں