اردوان کا پیغام ارطغرل غازی کے ذریعے – زبیر منصوری




ارطغرل اور عثمان کی ہر قسط میں یوں لگتا ہے اردوان مغرب ،ترک نوجوانوں کو کھلے پیغامات دے رہا ہے -امت کے نوجوانوں کوایمان علم ذہانت اور ہر میدان میں جنگ کے لئے تیار کر رہا ہے تطہیر و تعمیر افکار میں مصروف ہے-

صاف ستھری معاشرت محبت وفاداری تعلق جان نثاری اور دوسری طرف انسانوں کے اسی معاشرے میں سازش نفرت دشمنی تعصب اور اس سے نبٹنا ساتھ ساتھ چل رہے ہیں – بہادری جرات ہر طرح کے حالات کی جنگوں میں نہایت ذہانت سے دشمن سے اوپر کی چال لانا اور اسے حیران کر دینا عثمان میں تو زیادہ نکھر کر سامنے آ گیا ہے-عیسائی سازشوں کو سمجھنے اور مقابلہ کرنے میں مجھے تو عثمان مجسم اردوان لگتا ہے- قبائلی عصبیت اسلامی حکومت کے خاکے میں خوبصورتی سے رنگ بھرتی نظر آتی ہے-

بتدریج عثمان کی زبان سے اردوان کے خواب عثمانی ریاست کامیابی جدوجہد محنت اور کلمہ حق کی سربلندی سے جذباتی لگاوسبھی کچھ ہے -ادھر اللہ کے رسول ص سے عشق میں ڈوبا تعلق ،تصوف ،دعا ،سفید داڑھی والوں سے رہنمائی بھی اردوان کی شخصیت کے حصے ہیں -کبھی تو لگتا ہے۔بوزداغ نے یہ ڈرامے اردوان کے محل میں بیٹھ کر اس کی ڈکٹیشن کے ساتھ لکھے ہیں۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں