ویلڈن الومیناٹی – قاسم اقبال جلالی




کرونا وائرس ساری دنیا میں پھیل چکا ہے. کاروبارِ حیات بند ہوچکا. تجارت، تعلیم، مذہبی اجتماعات ، سیاحت غرض تمام شعبہ ہائے زندگی pause کی حالت میں چلے گئے ہیں. پوری دنیا کی سات ارب آبادی شدید ذہنی دباؤ ، خوف و ہراس میں مبتلا ہے. بیماری کی نہ تو علامات واضح ہیں نہ ہی وجوہات. بیماری کا ٹیسٹ بھی with precision تاحال ممکن نہیں. کم ترقی یافتہ ممالک تو دور، ترقی یافتہ ممالک بھی اس وائرس سے مقابلہ کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتے.
اس ساری صورتحال کے تناظر میں یقیناً یہ سوال بہت اہم ہے کہ کیا یہ کرونا وائرس واقعی ایک وبا ہے یا Bioterrorism ہے؟ یہ طاعون جیسی بیماری naturally پیدا ہوئی ہے یا یہ Biological warfare کا حصہ ہے؟ یہ ایک سانحہ ہے یا باقاعدہ planned سازش ؟ پہلے بھی متعدد بار عرض کر چکا ہوں کہ میں ایک conspiracy theorist ہوں. میری رائے سے آپ کا اتفاق ضروری نہیں ، تاہم اپنی گزارشات آپ کے سامنے ضرور رکھنا چاہوں گا. میرے نزدیک موجودہ وبا کرونا وائرس ایک مکمل پلان کے تحت دنیا بھر میں پھیلائی گئی ہے. جس کے پیچھے عالمی خفیہ شیطانی تنظیم الومیناٹی (1776) کا ہاتھ ہے. ایلومیناٹی اور فری میسن وغیرہ کی تفصیلات کسی اور وقت، مگر مختصراً یہ بتاتا چلوں کہ یہ عالمی خفیہ شیطانی تنظیم ہے. اس کو چند انتہائی طاقتور خاندان پسِ پردہ رہ کر چلارہے ہیں. (Rothschild خاندان، Rockefeller خاندان، برطانوی شاہی خاندان، khazarians وغیرہ) یہ لوگ کسی مذہب کے پیروکار نہیں بلکہ براہِ راست شیطان کے پجاری ہیں اور اُسی کی ہدایات پہ چلتے ہیں. کچھ لوگ بظاہر یہودی ہیں اور کچھ عیسائی. اس تنظیم کا سب سے اہم مقصد یہودیوں اور یہود نواز و مذہب بیزار عیسائیوں کی مدد سے دجال کی آمد اور اسکی مطلق العنان حکمرانی کی راہ ہموار کرنا ہے. اس بنیادی مقصد کو حاصل کرنے کیلئے انہوں نے New World Order کے نام سے ایک منصوبہ بنایا ہے. یہ ایک انتہائی شاطرانہ شیطانی منصوبہ ہے جس کے بہت سے حصے اور بہت سے steps ہیں اور یہ multidimensional ہے. اس پورے منصوبے کا لُبِ لباب Crux یہ ہے……
دنیا میں one world government کا قیام، دنیا میں one world religion کا نفاذ، دنیا میں one world currency کا نفاذ، اور آخر میں One World leader پہ اتفاق کا قیام (یعنی دجال یا Antichrist کو حاکم اعلی تسلیم کروانا)
ان مقاصد کو حاصل کرنے کیلئے پلان کو مزید چھوٹے پلانز میں تقسیم کیا گیا ہے جن میں سب سے خطرناک پلان دنیا کی آبادی کو سات ارب سے کم کر کے ایک ارب یا پچاس کروڑ تک لانا ہے. اور یہی وہ منصوبہ ہے جسکا براہِ راست تعلق‫ کرونا وائرس وبا سے ہے. دنیا کی آبادی کو کم کرنے کے شیطانی منصوبہ سازوں کے نزدیک متعدد فوائد ہیں. ایک یہ کہ کم آبادی کو کنٹرول اور Manage کرنا نسبتاً آسان ہوگا. بعد ازاں Chips install کرکے ان کے behavior کو مانیٹر کرنا زیادہ آبادی کی بنسبت بہت آسان ہوگا. دوسرا یہ کہ زیادہ آبادی کو مذہب سے دور رکھنے کیلئے نفسیاتی طور پہ تیار کرنا مشکل ہے بنسبت کم آبادی کے. نیز کم آبادی پہ اپنا کلچر impose کرنا بھی زیادہ آبادی کی نسبت آسان عمل ہے. تیسری بات یہ کہ کم آبادی کی صورت میں Planet earth کی Stability اور sustainability میں اضافہ ہو جائے گا اور Natural resources پہ دباؤ کم ہو جائے گا جو کہ Ruling Elite کیلئے بہتر ہوگا. چوتھا فائیدہ یہ ہوگا کہ وائرسز اور genetically engineered بیماریوں سے ایسے لوگوں کو ہلاک کر دیا جائے گا جو ان کی نظر میں سوسائٹی پہ بوجھ ہیں یا جنکی labour productivity بہت کم ہے. اس انداز سے انہیں جوان طاقتور labour force لمبے عرصے تک میسر رہا کرے گی جس کو میں استعمال کر سکیں گے. (اس نکتہ پہ مزید تحقیق کیلئے Transhumanism پہ ریسرچ کیجیے، یوٹیوب پہ چند اہم ویڈیوز اس پہ موجود ہیں)
دنیا کی آبادی کم کرنے کیلئے مختلف طریقے استعمال کیے جائیں گے جن میں علاقائی اور عالمی جنگیں. Fast foods اور‫ کیمیکل زدہ packed کھانے اور مشروبات کا استعمال عام کرنا. ملٹی نیشنل فارماسیوٹیکل کمپنیوں کے ذریعے شدید مگر خاموش side effects والی ادویات کی ترویج. Genetically engineered viruses اور بیماریوں کا عالمی و‫ علاقائی پھیلاؤ. گلوبل وارمنگ کے ذریعے قحط سالی ، سیلاب برپا کرنا، پینے کے پانی اور اجناس کی کمی create کرنا وغیرہ. یہ تو رہی الومیںاٹی کی پلاننگ ، اب آتے ہیں کرونا وائرس کی طرف. میرے نزدیک اس وائرس کا وبا کی طرح پوری دنیا میں پھیلاؤ اسی شیطانی پلان New World Order کا حصہ ہے. اس سے قبل Ebola virus, Anthrax ، HIV, Hanta virus, Dengue، روٹا وائرس، SARS VIRUS, MERS VIRUS کا کامیاب تجربہ کیا جاچکا ہے. وبا کے آغاز پہ ہی انٹرنیشنل میڈیا کا اسکو بھرپور کوریج دینا ، شہ سرخیوں میں لگانا، تمام عالمی لیڈروں کا اس پہ بات کرنا شروع کر دینا ،لوگوں کو ڈرایا اور ہراساں کیا جانا، فورا لاک ڈاؤن ،‫کرفیو کی باتیں کرنا. یہ سب وہی SOP ہے جو پراپیگنڈہ کیلئے افغانستان اور عراق حملے کے وقت استعمال کیا گیا. بیماری پھیلانے کے ساتھ ساتھ اس عالمی لیول کے پراپیگنڈہ اور میڈیا کے ذریعے ہراسگی کے پیچھے بھی ایک اہم مقصد کار فرما تھا. اور وہ مقصد تھا Mind and behavior Control جو کہ اومیناٹی کے اہم ترین ہتھیاروں میں سے ہے. کرونا وائرس وبا کا پھیلاؤ محض ایک drill ہے، ایک مشق ہے ایک تجربہ ہے. اصل War ابھی آگے ہے. موجودہ وبا کا پھیلایا جانا اور اسکے حوالے سے شدید ترین اور شاطرانہ میڈیا کمپین ایک اہم تجربہ ہے جس سے مستقبل کی مزید پلاننگ کی جانی مقصود ہے. موجودہ وبا شاید 2-3 ماہ میں کنٹرول کر لی جائے اور اس بار اموات بھی مجموعی طور پہ کم رہیں مگر مستقبل میں یہ تجربہ منصوبہ سازوں کو مزید بہتر اور خطرناک پلاننگ کرنے کی صلاحیت دے دے گا. الومیناٹی نے اس وائرس کے پھیلاؤ سے انتہائی اہم نتائج حاصل کرلیے ہیں اور باقی نتائج وقت کے ساتھ سامنے آ جائیں گے، تاہم انکا بھی اندازہ لگایا جاسکتا ہے. نتائج یہ ہیں.
پہلی بات یہ کہ لوگ Biological warfare کے بارے میں بالکل لاعلم نکلے ہیں اور ابھی تک اس Bioterrorism کو ایک قدرتی وبا ہی سمجھ رہے ہیں جوکہ ان کیلئے ایک positive result ہے………دنیا کو لاک ڈاؤن کرنے ایک کامیاب تجربہ کر لیا گیا اور اس لاک ڈاؤن کے نتیجہ میں لوگوں حکومتوں آزاد میڈیا اور مذہبی رہنماؤں کے ردِعمل کو‫ نوٹ کر لیا گیا اور اب اس لاخ ڈاؤن کے اثرات جانچے جائیں گے اور پلان کی خامیوں کو دور کر کے آئیندہ مزید بہتر پلان بنایا جائے گا.اس تجربہ کے ذریعے قرنطینہ یا Quarantine کا concept ایک ہی جھٹکے میں پوری دنیا کے لوگوں تک پہنچا دیا گیا ہے اور انہیں شدید ذہنی مفلوج کر کے سمجھا دیا گیا ہے کہ جب کسی کو بیمار قرار دے کر quarantine کرنے کا حکم صادر ہوگا تو اس پہ احتجاج نہیں کرنا ، چاہے وہ شخص جسمانی بیمار ہو یا ذہنی بیمار. یوں عزیز سے عزیز تر رشتے کو بھی quarantine ہوتے دیکھ کر احتجاج نہ کرنے کی ہمیں indirectly تربیت دے دی گئی ہے. چنانچہ کل جب ہمارے مذہبی پیشواؤں کو، سیاسی سوجھ رکھنے والے رہنماؤں کو ذہنی بیمار قرار دے کر quarantine کیا جائے گا تو ہم نہ صرف خاموش رہیں گے بلکہ خوش ہونگے. ہمارے کسی عزیز کو شیطانی منصوبوں کی تکمیل میں رکاؤٹ سمجھ کر جب اسے خود ساختہ وائرس کا شکار بنا کر ہم سے دور کرنے یا وائرس کے بہانے قتل کر دیے جانے کی بات ہوگی تو ہم کرونا وائرس ٹریننگ اینڈ پروگرامنگ کی بدولت قطعاً احتجاج نہیں کر پائیں گے. (میری باتوں پہ کچھ دوستوں کو ہنسی آ رہی ہوگی مگر انتظار کیجئیے ایسا چند سالوں چند دہائیوں میں ہونے والا ہے)
ایک نتیجہ یہ بھی حاصل ہوا ہے کہ دنیا بھر کی ترقی یافتہ میڈیکل سائنس ابھی الومیناٹی کے ماتحت کام کرنے والی میڈیکل Bio-engineering labs سے بہت پیچھے ہے اور ایسے وائرس کی کئ ماہ سے مسلسل تباہی کے باوجود کوئی لیب اسکا توڑ نہیں بناسکی، جو کہ شیطانی منصوبہ سازوں کیلئے بہت خوش آئند ہے. سب سے اہم نتیجہ یہ ہے کہ دنیا اب انہی چند فارماسیوٹیکل کمپنیوں کی جانب دیکھ رہی ہے جو ان شیطانی تنظیموں کے کنٹرول میں ہیں. دنیا بے بسی کے عالم میں ہے. حکمران بھی بے بس ہو کر بِل بلا رہے ہیں اور گھٹنے ٹیک چکے ہیں. آج پوری دنیا کے عوام اور حکمران ان مغربی دوا ساز کمپنیوں کی طرف حسرت امید اور آس بھی نگاہوں سے دیکھ رہے ہیں کہ کب اعلان ہوگا کہ وبا کا علاج دریافت کر لیا گیا ہے. شاید آپ اندازہ نہیں لگا سکتے کہ اس بات پہ شیطان کے پجاری کس قدر خوش ہو رہے ہونگے. وہ سوچ رہے ہونگے مستقبل کے اس منظر بارے جب وہ پوری دنیا میں مصنوعی قحط بربا کریں گے اور سارا غلّہ اور اجناس ان عالمی سرمایہ داروں کے پاس ہوگی اور ان کا سربراہ دجال کہے گا مجھے اپنا رہنما‫ مانو تب غذا دونگا، پھر کہے گا اپنا خدا مانو تب Artificial Rain برساؤں گا اور اجناس دونگا. کیا حسین منظر ہوگا وہ. (اس بات کا اشارہ رسولِ پاک ص کی حدیث مبارکہ میں بھی ہے کہ غذا اجناس بارش سب کچھ دجال کے کنٹرول میں چلا جاۓ گا. لوگوں کیلئے ایمان بچانا مشکل ہو جائے گا).
پہلے بھی ایک پوسٹ میں عرض کر چکا ہوں کہ آنے والے سالوں میں وہی قوم سپر پاور کہلاۓ گی جس کے پاس Biotechnology ، Genetic engineering ، Biomechanics ، Medicine and pharmaceutical technology and research ہوگی. اگلی جنگیں جہاں روایتی جنگی سازوسامان سے لڑی جائیں گی وہاں میڈیکل انڈسٹری انتہائی اہم کردار ادا کرے گی. یاد رکھیں عالمی شیطانی تنظیموں کی بھی بہت سی کمزوریاں ہیں جن میں سے ایک ہے mass awareness. جتنے زیادہ لوگ ان کے شیطانی منصوبوں سے aware ہوتے جائیں گے ان کے شیطانی منصوبے اتنی جلدی expose ہونگے اور انہیں resistance کا سامنا کرنا پڑے گا. مذہب سے لگاؤ، سطحی معلومات کے بجائے حقیقی تعلیم شعور اور critical analysis کی صلاحیت ان شیطان کے پجاریوں کی اصل دشمن ہے. جنسی بے راہ روی اور مذہب بیزاری، عورت کی آزادی ان کے اہم ہتھیار ہیں.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے کہ دجال تب ظاہر ہوگا جب اسکے بارے میں بات کرنا کم کر‫دی جاۓ گی. یہی صورت حال آج ہے. دجال کی بات کی جاۓ تو لوگ اسے ہنسی مذاح میں اُڑا دیتے ہیں. یہ وہ فتنہ ہے جس کے شر سے صحابہؓ اور دیگر انبیاء تو ایک طرف خود انبیاء کے سردار صلی اللہ علیہ وسلم نے پناہ مانگی ہے. کرونا وائرس وبا دجال کے شرور میں سے ایک شر ہے. اور یہ محض ایک چھوٹا laboratory test ہے. ابھی اصل وبائیں آنا باقی ہیں. یہ جو بے بسی ہم محسوس کر رہے ہیں یہ کچھ بھی نہیں ، آنے والے دجالی فتنے اور شر اس سے کہیں بڑھ کر ہونگے. (معاذ اللہ ) اندازہ لگا لیجئے کہ دجال کے شر کیسے ہونگے اور کیا وجہ ہوئی ہوگی کہ انبیاء نے بھی اس سے پناہ مانگی؟…….یاد رکھیں جب اللہ کسی قوم سے ناراض ہوتا ہے تو اپنے ہی منکرین کو بسا اوقات اس چہیتی قوم پہ بطور عذاب مسلط کر دیتا ہے. قرآن اس بات کا گواہ ہے جہاں بتایا گیا ہے کہ بنی اسرائیل کی نافرمانیوں پہ دو مرتبہ یروشلم کی تباہی کروائی گئی ، ایک مرتبہ Babylonians کے ہاتھوں اور دوسری دفعہ Romans کے ہاتھوں. اور اللہ نے رومی کفار کو بھی “اپنے بندے” کہہ کر زکر‫ کیا کہ ہم نے بنی اسرائیل پہ ان کو‫ مسلط کیا. (QURAN- Al-isra 17:4، 17:5) اس لیے موجودہ صورتحال کو اللہ پاک کی شدید ناراضگی سمجھنے والے بھی درست ہیں اور یقیناً ہم گناہ گاروں پہ بطور عذاب یہ وبا اپنے منکرین سے مسلط کروا دی گئی ہے. اور نیک لوگوں پہ بطور آزمائش. (واللہ اعلم)
ضرورت اس امر کی ہے کہ مسلمان سنبھل جائیں اور‫ یکجا ہو جائیں. توبہ کریں اور اپنا راستہ درست کریں. شعائرِ اسلام اور احکاماتِ دینیہ کی پابندی کریں. عرب شہزادے عیاشیوں اور غیر ضروری عمارات بنوانے کے بجائے مسلم ممالک میں تعلیم و تحقیق پہ دولت خرچ کریں اور یہاں medical science ، Medicine ، Bioengineering ، اور genetic engineering کے شعبوں مہارت حاصل کی جاۓ اور ایسے دجالی حملوں سے بچنے نیز عوام میں عموماََ اور مسلمانوں میں خصوصاََ قوتِ مدافعت بڑھانے والی نیچرل ادویات کی تیاری ممکن بنائی جاۓ. تاکہ مسلمانوں کو مغرب کی جانب نہ دیکھنا پڑے اور سخت ترین حالات میں بھی شیطان کے پجاریوں کے سامنے گھٹنے نہ ٹیکنے کی ضرورت پڑے. تب تک ویلڈن الومیناٹی ، تم اس تجربے میں کامیاب رہے. مگر یاد رکھنا تم اپنے منصوبے بناتے ہو اور اللہ اپنے منصوبے بناتا ہے، اور اللہ بہترین منصوبہ ساز ہے. آخری فتح خیر ہی کی ہوگی. انشاءاللہ

اپنا تبصرہ بھیجیں